غیراخلاقی زبان کا استعمال، پرویز خٹک نےمعافی مانگ لی


اسلام آباد(24نیوز) سابق وزیراعلیٰ پرویزخٹک نے انتخابی مہم کے دوران غیراخلاقی زبان استعمال کرنے پر الیکشن کمیشن سے غیرمشروط تحریری معافی مانگ لی.  الیکشن کمیشن کیس کا فیصلہ 9 اگست کو سنائے گا۔

چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں چاررکنی بنچ نے پرویزخٹک کے غیراخلاقی زبان استعمال کرنے کے نوٹس کی سماعت کی۔ کیس کے دوران چیف الیکشن کمشنر نے پرویزخٹک کے وکیل سے غیراخلاقی زبان استعمال کرنے سے متعلق استفسار کرتے ہوئے کہا، کیا پرویزخٹک نے جو کہا وہ آپ نے سنا ہے؟ جس پر وکیل نے جواب دیتے ہوئے کہا جی انکی تقریر سنی ہے۔ پرویزخٹک کے وکیل سکندر بشیرمہمند نے کہا 19جولائی کوالیکشن کمیشن کے نوٹس میں واضح نہیں تھا کہ انکی کس تقریر پر نوٹس لیا گیا۔تاہم پرویزخٹک کا بیان غیراختیاری تھا اور ان الفاظ پر شرمندہ بھی ہیں اورغیرمشروط معافی مانگتے ہیں ۔

پڑھنا مت بھولیں: شیخ رشید کو بڑی خوشخبری مل گئی

چیف الیکشن کمشنرنے ویڈیو کلپ کمرہ عدالت میں چلانے کی بات کی تو پرویز خٹک کے وکیل نے کمیشن کے سامنے تحریری معافی نامہ جمع کرادیا ۔ الیکشن کمیشن نے کہاکہ اگرپرویز خٹک نے نازیبا گفتگو کی تردید یا افسوس کا اظہارکیا توویڈیوثبوت پیش کریں۔  الیکشن کمیشن نے نوٹس کا فیصلہ نو اگست کو سنانے کا کہتے ہوئے سماعت 9 اگست تک ملتوی کردی۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔