اقلیتوں کےحقوق کا خیال آج تک کسی کونہیں آیا: چیف جسٹس

 اقلیتوں کےحقوق کا خیال آج تک کسی کونہیں آیا: چیف جسٹس


اسلام آباد(24نیوز) سپریم کورٹ اسلام آباد میں2005 کے زلزلہ متاثرین کی امداد، اقلیتوں کے حقوق کے کیس پربھی سماعت ہوئی.

 تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں آج اہم مقدمات سماعت ہوئی،اقلیتوں کے حقوق سے متعلق کیس میں سابق سینئر پولیس افسر اور ڈی جی آئی بی شعیب سڈل عدالت میں پیش ہوئے، اقلیتوں کے حقوق کیس پر  چیف جسٹس کا کہنا تھاکہ شعیب سڈل صاحب جسٹس تصدق جیلانی کے آرڈر پر عمل تو ہونا ہے،اگر عدالت کی مدد درکار ہے تو بتائیں، ڈاکٹر شعیب سڈل کا کہنا تھا کہ ابھی تک فیصلے پر عملدرآمد کا طریقہ کار طے نہیں ہوا،طریقہ کار عدالت نے طے کرنا ہے۔

چیف جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ عدالت نے تصدق جیلانی فیصلے پر عملدرآمد کے لئےسڈل کمیشن مقرر کیا تھا،آبادی کانفرنس کے دوران میں نے کہا تھا کہ ہم 1872 کے قوانین کے تحت کام کر رہے ہیں،ہم پر الزام لگایا جاتا ہے کہ عدلیہ کے ادارے کو ٹھیک نہیں کیا، قانون سازی مقننہ کی ذمہ داری ہے، ہم وزارت قانون کو کہہ دیتے ہیں کہ فیصلے پر عملدرآمد کے لیئے قانون میں ترمیم کا بل پیش کیا جائے، جس دن شعیب سڈل کی رپورٹ آجائے گی ہم وزارت قانون کو آرڈر کر دیں گے۔

ضرور پڑھیں:انکشاف 16 جون 2019

چیف جسٹس نے مزید ریمارکس دیئے کہ وعدہ کرتا ہوں وزارت قانون کو اقلیتوں سے متعلق بل پیش کرنے کی ہدایت ضرور دوں گا، جنرل مشرف سے آج تک اقلیتوں کے حقوق کا خیال کسی کو نہیں آیا، کیس کی سماعت آئندہ منگل تک ملتوی کردی گئی۔

2005زلزلہ متاثرین سےمتعلق کیس کی سماعت

سپریم کورٹ میں2005زلزلہ متاثرین کی امداد سے متعلق کیس کی سماعت بھی ہوئی، چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں بینچ نے زلزلہ فنڈ کیس کی سماعت بھی کی، عدالت عظمیٰ کا کہنا تھا کہدوران زلزلے سے متاثر لوگ پہلے نہایت خوشحال تھے، وہ لوگ پناہ گاہوں اورخیموں میں رہنے پرمجبور ہوگئے،  دنیا مدد کے لیے کھڑی ہوئی، آبادکاری کے لیے دل کھول کرپیسہ دیا، وہ پیسہ کہاں ہے، انہوں نے کہا کہ موجودہ نہیں گزشتہ حکومتوں کی بات کررہا ہوں وہ ذمہ دار ہیں۔

وکیل متاثرین نے عدالت کو بتایا کہ گزشتہ سال 85 ارب کی رقم قومی خزانے میں گئی، جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ آپ کہے رہے ہیں 83 فیصد منصوبے مکمل ہوچکے ہیں، انہوں ایرا کے نمائندے سے استفسار کیا کہ ایک منصوبہ بتا دیں جو مکمل کیا ہو جس پر ایرا کے نمائندے نے جواب دیا کہ سڑکیں بنائی، پل بنائے اور83 فیصد کام واقعی کیا ہے۔

بعدازاں سپریم کورٹ آف پاکستان نے زلزلہ فنڈ کیس کی سماعت پیر تک ملتوی کرتے ہوئے آئندہ سماعت پرچیئرمین ایرا کو طلب کرلیا۔

M.SAJID KHAN

CONTENT WRITER