روزمرہ کی اشیاءعوام کی پہنچ سے دور،مہنگائی عروج پر پہنچ گئی

روزمرہ کی اشیاءعوام کی پہنچ سے دور،مہنگائی عروج پر پہنچ گئی


اسلام آباد( 24نیوز ) مسلم لیگ کی حکومت کے آخری ماہ کھانے پینے اور روزمرہ استعمال کی اشیاءکی قیمتوں میں اضافے کی رفتار تیز رہی، نئے کپڑے سلوانا اور بچوں کو تعلیم دلانا بھی مزید مہنگا ہو گیا۔
پاکستان ادارہ شماریات کے مطابق مئی میں مہنگائی کی اوسط شرح 4.2 فیصد تک پہنچ گئی،، اپرئل میں یہ شرح 3.7 فیصد تھی،، کھانے پینے کی اشیا میں سب سے زیادہ اضافہ چکن کی قیمت میں دیکھا گیا،، جو 21 فیصد مہنگا ہو گیا, گوشت کی قیمت 10 فیصد،، چاول اور پھلوں کی 9 فیصد اور انڈوں کی 7 فیصد بڑھ گئی،، مصالحہ جات،، تیار کھانے،، شہد اور چائے کی قیمت میں بھی اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

یہ بھی لازمی پڑھیں: جسٹس (ر) ناصر الملک نے نگران وزیراعظم کے عہدے کا حلف اٹھا لیا
روز مرہ استعمال کی اشیا اور سروسز میں سے مٹی کا تیل گزشتہ سال سے 33 فیصد اور پیٹرول 13 فیصد مہنگا فروخت ہوا،، تعلیمی اخراجات 13 فیصد ،، تعمیراتی اخراجات 10 فیصد،، اور ڈاکٹر کی فیس 9 فیصد زیادہ ہو گئی،، جبکہ ٹیلرنگ کے اخراجات اور کاسمیٹکس کی قیمت میں بھی 9 فیصد اضافہ دیکھا گیا،، تاہم تازہ سبزیوں اور دالوں کی قیمت میں کمی رہی،، رپورٹ کے مطابق رواں مالی سال کے پہلے 11 ماہ کے دوران مجموعی طور پر مہنگائی کی شرح 3.8 فیصد رہی۔