عابد شیر علی تقریر میں تمام اخلاقی حدیں عبور کرگئے



لاہور( 24نیوز )وزیر قانون پنجاب راناثنااللہ نے پی ٹی آئی کی خواتین کے بارے میں جونازیبا زبان استعمال کی وہ توپھربھی قابل سماعت تھی مگرعابدشیرعلی نے جلسے میں جوزبان استعمال کی وہ نہ سنی جاسکتی ہے نہ ہی اسے ٹی وی پرپیش کیا جاسکتاہے۔

خواتین ارکان اسمبلی کے بارے میں عابدشیرعلی کی اس بے ہودہ زبان کا کسی اورکونہیں کم ازکم مریم نوازکو نوٹس لینا چاہیے، عابدشیرعلی کی نازیبا گفتگوجس حدتک سنائی جاسکتی ہے وہ ہم سنوا رہے ہیں۔

یاد رہے لاہور میں میڈیا سے بات کرتے رانا ثنا اللہ نے کہا تھا کہ لاہور میں عمران خان کے جلسہ میں آنیوالی خواتین گھریلو نہیں تھیں ان کے ٹھمکے بتارہے تھے کہ وہ کہیں اور سے آئی تھیں۔اب انہوں نے وضاحتیں دینی شروع کردی ہیں کہ میں خواتین کا بہت احترام اور ان کی سیاسی جدوجہد کی قدر کرتا ہوں، میں نے کسی سیاسی خاتون کی جدوجہد کے حوالے سے منفی بات نہیں کی، میں نے لاہور میں تحریک انصاف کے 2011 اور 29 اپریل 2018 کے اجتماعات کے فرق کی نشاندہی کی۔

یہ بھی پڑھیں: سیاست میں غلاظت،ہم کہاں جارہے ہیں؟

دوسری جانب تحریک انصاف نے راناثناء اللہ کے خلاف پنجاب اسمبلی میں مذمتی قرارداد جمع کرادی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ سیاسی مخالفین کے خلاف گندی زبان راناثناءاللہ کا وطیرہ بن گیاہے، خواتین کے خلاف راناثناءاللہ کے ریمارکس کی مذمت کرتے ہیں، راناثناء اللہ کو وزارت سے ہٹا کر بازپرس کی جائے۔