اسحاق ڈار کی جائیداد نیلام ہوگی یا نہیں؟فیصلہ محفوظ



اسلام آباد( 24نیوز ) احتساب عدالت نے سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی جائیداد فروخت سے متعلق قومی احتساب بیورو (نیب) کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا جسے کسی بھی وقت سنایا جاسکتا ہے۔

احتساب عدالت نمبر ایک کے جج محمد بشیر نے نیب کی جانب سے جمع کرائی گئی درخواست پر سماعت کی جس کے بعد اسحاق ڈار کی جائیداد کی نیلامی سے متعلق فیصلہ محفوظ کرلیا۔ احتساب عدالت نے فیصلہ کل سنانے کی تاریخ دے کر کیس کی سماعت ملتوی کردی ہے-

یاد رہے کہ 27 ستمبر کو نیب نے احتساب عدالت میں درخواست جمع کراتے ہوئے استدعا کی تھی کہ اسحاق ڈار مفرور ہیں ان کی پاکستان میں موجود تمام جائیدادیں فروخت کرنے کی اجازت دی جائے،28 ستمبر کو ہونے والی گزشتہ سماعت پر نیب نے اسحاق ڈار کی قرق شدہ جائیداد کی تفصیلات عدالت میں جمع کرائیں جس کے مطابق سابق وزیرخزانہ کے دبئی میں 3 فلیٹس، گلبرگ لاہور میں ایک گھر اور اسلام آباد میں چار پلاٹس ہیں۔

نیب کے مطابق اسحاق ڈار اور ان کی اہلیہ کے پاس پاکستان میں 6 گاڑیاں ہیں جن میں لگڑری گاڑیاں بھی شامل ہیں،نیب نے عدالت کو بتایا تھا کہ بیرون ملک تین کمپنیوں میں اسحاق ڈار شراکت دار بھی ہیں جب کہ میاں بیوی نے ہجویری ہولڈنگ کمپنی میں 34 لاکھ 53 ہزار کی سرمایہ کاری بھی کر رکھی ہے۔

واضح رہے سابق وزیر خزانہ اس وقت لندن میں موجود ہیں اور عدالت نے ان کو مفرور قرار دے رکھا ہے،ان کے وکلا ءکی طرف سے جمع کروائے گئے سرٹیفکیٹس کے مطابق وہ بیمار ہیں اور وہاں علاج کروا رہے ہیں۔