’’نواز شریف کے وارنٹ جاری کیے جائیں گے‘‘

’’نواز شریف کے وارنٹ جاری کیے جائیں گے‘‘


24نیوز : احتساب عدالت نےنواز شریف کی فلیگ شپ ریفرنس میں آج کی حاضری سے استثنا کی درخواست منظور کر لی، خواجہ حارث طبیعت کی ناسازی کے باعث عدالت پیش نہ ہوئے، عدالت نے کیس کی سماعت بنا کسی کارروائی کے ملتوی کر دی۔

تفصیلات کے مطابق  نواز شریف کے خلاف فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک نے کی، نواز شریف اور وکیل خواجہ حارث عدالت میں پیش نہ ہوئے، معاون وکیل نے عدالت کو بتایا کہ خواجہ حارث کی طبیعت خراب ہے، پراسیکیوٹر نیب نے کہا نواز شریف نے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست بھی دائر نہیں کی، یہ مرضی سے عدالت کو چلانا چاہتے ہیں، معاون وکیل کی موجودگی میں گواہ کا بیان قلمبند کیا جائے، عدالت نے ریمارکس دیے کہ پانچ منٹ میں معلوم کر کے بتائیں ورنہ نواز شریف کے وارنٹ جاری کیے جائیں گے۔

وقفہ کے بعد سماعت دوبارہ شروع ہوئی تو عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہ مجھے بتا دیں آپ لوگ چاہتے کیا ہیں, میں آڈر لکھوا دیتا ہوں آپ لوگ چیلنج کرتے رہنا, کیا سارا دن انتظار میں ہی بیٹھا رہوں، میں نے آپ لوگوں کی وجہ سے باقی تمام کیسسز ملتوی کر دیے ہیں، خواجہ حارث کی تو سمجھ آ رہی ہے کیا ان کی ٹیم بھی بیمار ہو گئی ہے، 15 منٹ دے رہا ہوں آپ تسلی سے پوچھ لیں۔

وقفہ کے بعد معاون وکیل نے عدالت کو بتایا کہ نواز شریف کا کہنا ہے کہ وہ دو تاریخوں میں کنفیوز ہو گئے تھے جس وجہ سے حاضر نہیں ہو سکے, جج ارشد ملک نے ریمارکس دیے کہ ان کا کنفیوز ہونا بنتا ہے کیا باقی وکلاء بھی کنفیوز ہو گئے تھے، معاون وکیل نے عدالت کو بتایا کہ خواجہ حارث کل بھی پیش نہیں ہوسکیں گے، معاون وکیل نے نواز شریف کی آج کی حاضری سےاستثنا کی درخواست دی جسے عدالت نے منظور کرتے ہوئے فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت 4 اکتوبر تک ملتوی کر دی۔