عطاءالحق قاسمی کو کس خصوصیت پر چیئرمین بنایا گیا؟ :چیف جسٹس


اسلام آباد(24نیوز) چئیرمین پی ٹی وی عطاءاللہ قاسمی کی تقرری سے متعلق کیس کی سماعت، عدالت نے پرویز رشید، فواد حسن فواداور عطاء الحق قاسمی سمیت دیگر کو نوٹس جاری کر دئیے، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ سمری پر دستخط نواز شریف نے کئے انہیں بھی بلا سکتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس نے کیس کی سماع کےدوران ریمارکس دئیے کہ عطاءالحق قاسمی کو 2 سال کے اندر  27کروڑ روپے تنخواہ و مراعات کس قانون کے تحت دی گئیں؟ اگر سابق وزیراعظم نے غلط تعیناتی کی ہے تو یہ رقم ان سے ہی وصول کی جائے۔ثابت ہوگیا کہ عطاءالحق قاسمی نے تنخواہ اور مراعات غلط حاصل کی تو انہیں یہ رقم واپس کرنا ہوگی۔ سیکرٹری اطلاعات احمد نفیس سکھیرا اوربابربخت نے عدالت کو بتایا کہ عطاءالحق قاسمی کو چیئرمین پی ٹی وی بورڈ آف ڈائریکٹرز کی سفارش کے بعد بنایا گیا تھا۔ چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ 2 سال کے دوران کتنی رقم عطاءالحق قاسمی کو ادا کی گئی۔ جس پر سیکرٹری اطلاعات نے عدالت کو بتایا کہ 27 کروڑ 80 لاکھ روپے عطاءالحق قاسمی کو ادا کیےگئے۔

دوسری جانب چیف جسٹس نے کہا عطاءالحق قاسمی کو کس خصوصیت پر چیئرمین بنایا گیا؟ سیکرٹری اطلاعات نے کہا کہ وہ مشہور رائٹر اور ڈرامہ نگار ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا مجھے تو یہ سارا ہی ڈرامہ لگتا ہے۔ یہ سارا کام فواد حسن فواد نے کیا ہوگا۔1کروڑ روپیہ ماہانہ بنتا ہے جو عطاءالحق قاسمی نے وصول کئے۔سماعت 12فروری تک ملتوی کر دی گئی۔