شریف برادران جہاں مرضی چلے جائیں قوم اب این آر او قبول نہیں کرے گی:عمران خان

شریف برادران جہاں مرضی چلے جائیں قوم اب این آر او قبول نہیں کرے گی:عمران خان


اسلام آباد(24نیوز)پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان انسداد دہشتگردی کی عدالت میں پیش ہوگئے،انہوں نے عدالت سے نکلتے ہی کہا ہے کہ شریف برادران جہاں مرضی چلے جائیں قوم اب این آر او قبول نہیں کرے گی۔

اسلام آباد میں انسداد دہشت گردی کی عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا ہے کہ شریف برادران سعودی عرب اپنی چوری بچانے اور این آر او لینے کے لیے گئے تھے۔

انہوں نے کہا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرپ کو کوئی سمجھ ہی نہیں ہے، انہیں افغان جنگ اور پاکستان میں دہشت گردی کے نتیجے میں ہونے تباہی کا بھی علم نہیں، ایسا لگتا ہے کہ ٹرمپ کو پاکستان کے دشمنوں نے بریف کیا ہے، اس جنگ سے ہماری معیشت کو 100 ارب ڈالر سے زیادہ کا نقصان ہوا۔

عمران خان نے کہا کہ کسی اور کی جنگ جب پیسے لے کر لڑیں گے تو اس میں ذلت اور تباہی ہی ہے، جب میں نے کہا یہ ہماری جنگ نہیں، مجھے کہا گیا کہ یہ طالبان خان ہے، میں نے کہا کہ اس جنگ میں ہمارا نقصان ہوگا تو میرا مذاق اڑایا گیا تاہم آج قوم کے سامنے حقائق آگئے ہیں، اس لیے کبھی کسی کی جنگ میں شرکت نہیں کرنی چاہیے۔

عمران خان نے کہا کہ نواز شریف کہتے ہیں کہ مجھے اقامے پر نکالا، اقامہ اور ایف زیڈ کمپنی منی لانڈرنگ کا طریقہ تھا، دونوں بھائی سعودی عرب اپنی چوری بچانے اور این آر او لینے کے لیے گئے ہیں تاہم یہ جہاں مرضی چلے جائیں قوم این آر او قبول نہیں کرے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ اربوں کی چوری کو بچانے کے لیے باہر کی قوت کو کہہ رہے ہیں ہمیں بچالو، یہ سمجھتے ہیں کہ پاکستانی قوم بھیڑ بکریاں ہیں جو خاموشی سے یہ سب تسلیم کرلے گی، اگر این آر او کی خوشبو بھی آئی تو قوم باہر نکلے گی اور شاہد خاقان عباسی کی حکومت برداشت نہیں کرسکے گی۔

چیرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا تھا کہ حکومت ملک میں چوروں کو بچانے کے سوا کچھ کام نہیں کررہی، اس لیے قبل از وقت انتخابات ضروری ہے تاکہ نیا مینڈیٹ آئے اور کام کرے-

مزید جاننے کیلئے ویڈیو پر کلک کریں