بلاول بھٹو کو بھی الیکشن ملتوی ہونے کا خدشہ


کراچی( 24نیوز )ملک میں عام انتخابات کا شیڈول آنے کے باوجود مشکوک دکھائی دے رہے ہیں جس پر سیاسی رہنما اور دیگر ناقدین مختلف دلائل پیش کررہے ہیں، پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اصولی طور پر انتخابات کے التوا کے خلاف ہیں۔
انہوں نے کہا ہے کہ اپنے ایک بیان میں چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ اسلام آباد، بلوچستان اور لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے اور ان کی ٹائمنگ تشویش کا باعث ہیں، بلاول بھٹو زرداری نے وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک کے الیکشن کمیشن کو لکھے گئے خط اور الیکشن ملتوی کرنے کے لیے بلوچستان اسمبلی کی قرارداد پر بھی تشویش کا اظہار کیا۔
یادرہے گزشتہ روز پیپلز پارٹی کے رہنماﺅں اعتزاز احسن،فرحت اللہ بابر اور شیری رحمان بھی اس خدشے کا اظہار کرچکے ہیں ان کا کہنا تھا کہ لگتا ہے کہ کوئی سسٹم انتخابات کو التوا میں ڈال رہا ہے۔
واضح رہے کہ گزشتہ روز بلوچستان ہائی کورٹ نے کوئٹہ میں صوبائی اسمبلی کے 8 حلقوں کی حلقہ بندیوں کو کالعدم قرار دیا تھا،اسلام آباد ہائیکورٹ نے بھی ایبٹ آباد کے 2 حلقوں کی حلقہ بندیاں کالعدم قرار دے ڈالیں، جبکہ اسلام آباد ہائیکورٹ اس سے پہلے بھی 10 اضلاع کی حلقہ بندیاں کالعدم قرار دے چکی ہے،دوسری جانب گزشتہ روز ہی لاہور ہائیکورٹ نے کاغذات نامزدگی میں ترامیم کالعدم قرار دے کر الیکشن کمیشن کو نئےکاغذات نامزدگی تیار کرنے کا حکم دیا تھا، جس کے بعد الیکشن کمیشن نے ہنگامی اجلاس طلب کرتے ہوئے ریٹرننگ افسران کو آج کاغذات نامزدگی کی وصولی سے روک دیا۔

یہ بھی پڑھیں: کوئی سسٹم انتخابات کا التوا چاہتا ہے: پاکستان پیپلز پارٹی
خیال رہے 31 مئی کو بلوچستان اسمبلی میں آئندہ عام انتخابات کی تاریخ میں ایک ماہ کی توسیع کی قرارداد بھی منظور کی گئی تھی،قرارداد کے متن میں کہا گیا تھا کہ جولائی میں لوگ فریضہ حج کی ادائیگی کے لیے سعودی عرب میں ہوں گے اور جولائی میں مون سون بارشوں کے باعث بلوچستان سےلوگ نقل مکانی بھی کرتے ہیں جس کی وجہ سے لوگ اپنے حق رائے دہی سے محروم رہیں گے لہٰذا عام انتخابات اگست 2018کے آخری ہفتے میں کرائےجائیں۔
واضح رہے کہ عام انتخابات 2018 کے لیے 25 جولائی کی تاریخ مقرر کی گئی ہے۔