سندھ میں میٹرک کے امتحان مذاق بن گئے

سندھ میں میٹرک کے امتحان مذاق بن گئے


کراچی (24 نیوز) سندھ میں میٹرک کے امتحان مذاق بن گئے، دفعہ 144 بھی کام نہ آئی،  امتحانی سنٹرز کے باہر نقل کرانے والوں کا راج برقرار۔

چئیرمین کراچی میٹرک بورڈ ڈاکٹر سعید الدین کہتے ہیں امتحانات میں مضافاتی اسکولوں سے نقل کی زیادہ شکایات مل رہی ہیں۔  کوشش کریں گے اگلے سال تمام امتحانی مراکز پرائیویٹ سیکٹر میں بنائے جائیں۔ چیئرمین بورڈ نے نجی اسکول کا دورہ کیا، جہاں سی سی ٹی وی کیمروں سے نگرانی کی جارہی ہے۔ میٹرک امتحانات کے تیسرے روز کمپیوٹر سائنس کا پرچہ ہوا۔ چئیرمین بورڈ نے گلشن اقبال میں واقع نجی اسکول کا دورہ کیا جسے ماڈل اسکول قرار دیا گیا ہے۔

چئیرمین میٹرک بورڈ نے شاہ فیصل کالونی میں گورنمنٹ گرلز اسکول کا بھی دورہ کیا اور وہاں طالب علم کو موبائل فون سے نقل کرتے پکڑلیا۔ ان کا کہنا تھا آئندہ سال کوشش کریں گے کہ امتحانی مراکز کو پرائیویٹ اسکولوں میں ہی بنایا جائے۔  بورڈ انتظامیہ کا کہنا ہےمیٹرک امتحانات کے دوران مضافاتی اسکولوں سے نقل کی شکایت موصول ہورہی ہیں جس کی روک تھام کے لیے کارووائی جاری ہے۔

Malik Sultan Awan

Content Writer