ادویات کی قیمتوں میں پھر بے تحاشہ اضافہ

ادویات کی قیمتوں میں پھر بے تحاشہ اضافہ


لاہور(24نیوز) تبدیلی سرکارمیں زندگی کی قیمت کچھ اوربڑھادی گئی۔ امراض قلب،جان لیوا امراض اورشوگر کنٹرول کرنے والی ادویات کی قیمتوں میں تین سوفیصد تک اضافہ کردیاگیا۔ حکومت نےخودساختہ قیمتیں بڑھانے والوں کیخلاف ایکشن لینے کی ٹھان لی۔

نئےپاکستان میں عوام پرعلاج کےدروازےبندکرنے کے منصوبے پر عملدرآمد شروع، فارما انڈسٹری نے ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی کی آشیرباد سے ادویات کی قیمتوں میں 100 سے 300 فیصد اضافہ کردیا۔ ملکی تاریخ میں شوگر، بلڈ پریشراور دل کے امراض سمیت معدے،جگر،دماغی امراض، نزلہ، زکام، بخار،درد اور ڈپریشن کی ادویات کی قیمتوں میں دو گنا سے بھی زیادہ بڑھا دیں۔

ڈریپ نے صرف 15 فیصد اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کیا مگر مقامی اور ملٹی نیشنل ادویہ ساز کمپنیوں نے آپس میں ملی بھگت کرکے قیمتیں کئی گنا تک بڑھا دیں۔ جان لیوا امراض کی ادویات 399 روپے تک مہنگی کر دی گئیں جس کے مطابق امراض قلب کی دوا ٹری فورج کی قیمت 186 روپے سے بڑھا کر 485 روپے، شوگر کنٹرول کرنے والی دوا کی قیمت 272 سے بڑھا کر460 روپے،ٹی بی جیسی خطرناک بیماری کی دوا میں 204 روپے،گلے کے امراض کی دوا ایتھروسن کی قیمت 548 سے بڑھا کر921 روپے کردی گئی جبکہ ڈسپرین کی قیمت میں 27 روپے فی پیکٹ کا اضافہ کردیا گیا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔