الیکشن میں تاخیر کیلئے مختلف حربے استعمال کیے جانے لگے

الیکشن میں تاخیر کیلئے مختلف حربے استعمال کیے جانے لگے


24 نیوز: بھانت بھانت کی بولیاں، الیکشن ملتوی کرانے کے لئے تاخیری حربے، کبھی وقت کم اور کام زیادہ کا بہانہ، تو کبھی احتساب کا نعرہ، دوسری جانب نگران وزیراعظم، چیف جسٹس پاکستان اورالیکشن کمیشن پرعزم ہیں کہ الیکشن وقت پر ہی ہوں گے۔

24 نیوز ذرائع کے مطابق عام انتخابات کے انعقاد میں تاخیر کے لیے مختلف تجاویز استعمال ہونے لگی۔  کہیں سے احتساب کا عمل مکمل کرنے کی آوازیں، تو کہیں جولائی کی گرمی، بارشیں، سیلاب کا جواز بھی پیش کیا جانے لگا۔

یہ خبر بھی پڑھیں: چیف جسٹس پاکستان کا لاہور جناح ہسپتال کا دورہ، انتظامیہ کو کھری کھری سنائی

نگران وزیراعظم جسٹس ریٹائرڈ ناصرالملک نے کہا کہ کچھ بھی ہو الیکشن وقت پر ہی ہوں گے۔ دوسری جانب چیف جسٹس بھی کہہ چکے ہیں کہ الیکشن وقت پر ہوں گے، اگر الیکشن ملتوی ہوئے تو ذمہ دار الیکشن کمیشن ہوگا۔

پڑھنا مت بھولئے: ن لیگ کا مریم نواز کو بیگم کلثوم کے حلقہ سے ٹکٹ دینے کا فیصلہ

علاوہ ازیں الیکشن کمیشن نے کاغذات نامزدگی اورحلقہ بندیوں پر سپریم کورٹ جانے کا فیصلہ ضرور کیا ہے۔ اس کے باوجود الیکشن حکام نے بھی اس عزم کو دہرایا ہے کہ عام انتخابات 25جولائی کو ہی ہوں گے۔ الیکشن کمیشن نے کاغذات نامزدگی جمع کرانے سے بھی روک دیا۔