پاکستان میں کون، کب وزیر اعظم کے عہدے پر فائز رہا

پاکستان میں کون، کب وزیر اعظم کے عہدے پر فائز رہا


اسلام آباد(24نیوز) پاکستان کی پندرہویں قومی اسمبلی ملک کے 30 ویں وزیر اعظم کا انتخاب کچھ ہی دنوں میں کرے گی. اس سے قبل ملک میں کون کون اور کب وزیر اعظم رہا .

وزیر اعظم کا عہدہ قیام پاکستان کے بعد ہندوستان آزادی ایکٹ 1947 کے تحت تخلیق کیا گیا. پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیاقت علی خان 4 سال سے بھی کم مدت تک عہدے پر رہے. وہ 15 اگست 1947 کو منتخب ہوئے، اور 16 اکتوبر 1951 تک اپنے قتل تک عہدے پر رہے۔
لیاقت علی خان کے بعد 1951 سے 1958 کے مختصر دورانیے میں وزیر اعظم کا عہدہ میوزیکل چیئر بنا رہا، اور مختصر مدت میں 6 وزرائے اعظم عہدوں پر رہے، تاہم 1958 میں عہدے کو صدر پاکستان اسکندر مرزا نے ختم کردیا۔ پاکستان پیپلز پارٹی کے بانی ذوالفقار علی بھٹو 14 اگست 1973 سے 5 جولائی 1977 تک وزیر اعظم رہے، اس کے بعد جنرل ضیاء الحق نے بھی وزیر اعظم کا عہدہ ختم کردیا، جو1985 میں بحال کیا گیا۔
محمد علی جونیجو ملک کے دسویں وزیراعظم تھے، وہ 23 مارچ 1985 سے 29 مئی 1988 تک اس عہدے پر رہے۔ بے نظیر بھٹو ملک کی گیارہویں اور نہ صرف پاکستان بلکہ اسلامی دنیا کی بھی پہلی خاتون وزیر اعظم بنیں. وہ اس عہدے پر 2 دسمبر 1988 سے 6 اگست 1990 تک رہیں۔بارہویں وزیر اعظم غلام مصطفیٰ خان جتوئی 6 اگست 1990 سے 6 نومبر 1990 تک ملک کے نگراں وزیر اعظم رہے۔
نواز شریف پہلی بار 6 نومبر 1990 کو ملک کے 13 ویں وزیر اعظم بنے، وہ اس عہدے پر 18 اپریل 1993 تک رہے۔ حکومت برطرفی اور بحالی کے عرصہ کے دوران میر بخش شیر مزاری ملک کے 14 وزیر اعظم بنے لیکن نواز حکومت 26 مئی 1993 کو بحالی ہوئی اور نواز شریف 8 جولائی 1993 تک وزیر اعظم رہے۔

معین قریشی 8 جولائی 1993 سے 19 اکتوبر 1993 تک وزیر اعظم رہے، جس کے بعد ایک بار پھر بے نظیر بھٹو 19 اکتوبر 1993 سے 5 نومبر 1996 تک وزیراعظم رہیں۔ملک معراج خالد 1996 سے 17 فروری 1997 تک وزیر اعظم رہے، جس کے بعد ایک بار پھر نواز شریف اس عہدے پر براجمان رہے، وہ 17 فروری 1997 سے 12 اکتوبر 1999 تک اس عہدے پر رہے، یہ ان کی دوسری مدت تھی۔
پرویز مشرف کی جانب سے اقتدار پر قبضے کے باعث ایک بار پھر ملک غیر اعلانیہ طور پر تین سال تک ملک وزیر اعظم کے بغیر چلا۔ پھر میر ظفراللہ جمالی کو ملک کے 20 ویں وزیر اعظم کے طور پر 23 نومبر 2002 کو منتخب کیا گیا، وہ 26 جون 2004 تک اس عہدے پر رہے۔ملک کے 21 ویں وزیر اعظم چوہدری شجاعت حسین 30 جون 2004 سے 26 اگست 2004 تک قریبا 57 دن تک وزیراعظم رہے۔
شوکت عزیز 28 اگست 2004 سے 15 نومبر 2007 تک ملک کے 22 ویں وزیر اعظم رہے، جس کے بعد ملک کا 23 واں وزیر اعظم میاں محمد سومرو کو بنایا گیا، وہ 16 نومبر 2007 سے 24 مارچ 2008 تک نگراں وزیر اعظم کے طور پر خدمات سر انجام دیتے رہے۔
پاکستان کی سیاسی تاریخ میں پہلی بار پیپلز پارٹی کی گزشتہ حکومت نے آئینی مدت پوری کی تھی، تاہم اسے مدت پوری کرنے کے لیے ایک سے زائد وزرائے اعظم پر گزارا کرنا پڑا، یوسف رضا گیلانی 25 مارچ 2008 سے 25 اپریل 2012 تک آئینی وزیر اعظم رہے۔ یوسف رضا گیلانی کو سپریم کورٹ نے توہین عدالت کیس میں جون 2012 میں نااہل قرار دیا۔راجا پرویز اشرف ملک کے 25 ویں وزیر اعظم تھے، جو 22 جون 2012 سے 24 مارچ 2013 تک اس عہدے پر رہے، جس کے بعد میر ہزار خان کھوسو کو نگراں وزیر اعظم کے طور پر 25 مارچ سے 5 جون 2013 تک عہدہ دیا گیا۔
نواز شریف وہ پہلے شخص ہیں، جنہوں نے 70 سال میں تین بار وزارت عظمیٰ کی کرسی حاصل کی، تاہم تینوں بار وہ اپنی مدت پوری نہ کرسکے، تیسری بار وہ 5 جون 2013 کو وزیر اعظم منتخب ہوئے۔ سپریم کورٹ نے پاناما لیکس اسکینڈل کیس میں ان کے اقامہ کے انکشاف کے بعد انہیں آرٹیکل 62 اور 63 کے تحت 28 جولائی کو نااہل قرار دیا۔
نواز شریف کے بعد قومی اسمبلی نے شاہد خاقان عباسی کو 28 ویں وزیر اعظم کے طور پر یکم اگست 2017 کو منتخب کیا جو 31 مئی کو حکومت کی مدت مکمل ہونے تک عہدے پر موجود رہے جس کے بعد جسٹس ریٹائرڈ ناصر الملک کو ملک کا 29 واں نگراں وزیر اعظم مقرر کیا گیا ہے۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔