ایران اور امریکا میں تلخی عروج پر پہنچ گئی

 ایران اور امریکا میں تلخی عروج پر پہنچ گئی


تہران(24 نیوز)ایرانی کمانڈر قاسم سلیمانی کی شہادت کے بعد ایران اور امریکا میں تلخی عروج پر پہنچ گئی ہے ، ایران کی جانب سے انتقام کا نعرہ بلند ہو گیا ہے جبکہ دوسری جانب امریکا اور اسرائیل سمیت خطے میں الرٹ ہے اور جنگ کی باتیں کی جارہی ہیں ۔

ایران کے پاس امریکا کے ساتھ جنگ لڑنے کے لئے بہت سے آپشن ہیں اور امریکا بھی اتحادیوں کے ساتھ ملکر ایران کے خلاف بڑی کارروائی کرسکتا ہے۔ عالمی میڈیا کے مطابق ایران کے حمایت یافتہ گروپ خطے میں امریکی مفادات کو نقصان پہنچا سکتے ہی ۔عراق کے شیعہ ملیشیا، یمن کے حوثی باغی ایران کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں جو امریکا اور اس کے اتحادیوں کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔

ادھر لبنان میں حزب اللہ اسرائیل میں راکٹ حملے کرسکتی ہے۔غزہ میں حماس اور دیگر ایرانی نواز تنظیمیں اسرائیل کے لئے خطرات پیدا کرسکتی ہیں۔عالمی میڈیا کے مطابق  ایران افغانستان میں طالبان کے ساتھ تعلقات مزید آگے لے جاسکتا ہے۔

عالمی میڈیا کے مطابق ایران آبنائے حرمز میں مائیز بچھا کر دنیا کے زیر استعمال تیس فیصد تیل کی سپلائی روک سکتا ہے۔ایران کے پاس اس وقت روسی ساختی آبدوزیں ہیں جبکہ سپر سانک میزائل اور طیارے بھی ہیں جو امریکا کی تباہی کرسکتے ہیں۔ادھر امریکا کے پاس ففتھ جنریشن سے بھی آگے کے جنگی طیارے ہیں جو ایران کا بہت نقصان کرسکتے ہیں۔ایران سے امریکی جنگ ہوئی تو امریکی میڈیا کے مطابق امریکا کے ایک لاکھ فوجی خطے میں اتر سکتے ہیں جس سے بہت بڑی جنگ کا خدشہ ہے۔

Malik Sultan Awan

Content Writer