نگران وزراءکتنے امیر ہیں؟تفصیلات سامنے آگئیں

نگران وزراءکتنے امیر ہیں؟تفصیلات سامنے آگئیں


اسلام آباد( 24نیوز ) نگران وزیراعظم اور وزرائے اعلیٰ کے بعد وفاقی وزراءکے اثاثوں کی تفصیلات بھی سامنے آگئیں۔وزیر قانون و اطلاعات سید علی ظفر اٹھائیس کروڑ سے زائد اثاثوں کے مالک نکلے۔ اثاثہ جات جمع نہ کروانے والے 17 نگران وزرا ء کے نام جاری کر دئیے۔
نگران وزیر قانون سید علی ظفر 28 کروڑ 38 لاکھ 6 ہزار 22 روپے کے اثاثوں کے مالک ہیں، ان کا بینک بیلنس 11 کروڑ 15 لاکھ 34ہزار 679 روپے ہے جب کہ وہ ایک کروڑ 95 لاکھ 49 ہزار 499 روپے مالیت کی گاڑیوں کے بھی مالک ہیں۔دستاویزات کےمطابق علی ظفر کے پاس دبئی میں 3 اپارٹمنٹ، لندن ڈبلیو ٹو میں گھر اور برمنگھم میں بھی گھر ہے۔نگران وزیر خزانہ ڈاکٹر شمشاد اختر 4 کروڑ 4 لاکھ 4 ہزار 746 روپے کی مالک ہیں، ان کے نام اسلام آباد میں 3 اور کراچی میں ایک گھر ہے نگران وزیر داخلہ اعظم خان ایک کروڑ 45 لاکھ 29 ہزار سے زائد اثاثوں کے مالک ہیں۔
نگران وزیرتعلیم محمد یوسف شیخ 2 کروڑ 34 لاکھ 69 ہزار 701 روپے اثاثوں کےمالک ہیں، ان کا بینک بیلنس 51 لاکھ 37 ہزار 801 روپے ہے۔ نگران وزیر خارجہ عبداللہ حسین ہارون کا بینک بیلنس 48 لاکھ روپے سے زائد ہے، انہوں نے کراچی کی رہائش گاہ خاندانی وراثت ظاہر کی جب کہ 25 ایکڑ زمین جیمس آباد کراچی میں بھی ان کی ملکیت میں شامل ہے۔

یہ بھی لازمی پڑھیں:  مہنگائی کے دور میں کراچی نے بڑا اعزاز اپنے نام کرلیا
دوسری جانب الیکشن کمیشن نے اثاثوں کی تفصیلات جمع نہ کرانے والے 17 نگران وزراءکی تفصیلات جاری کر دیں الیکشن کمیشن نے ان وزرا کو کام سے روکنے پر بھی غور شروع کر دیا۔پنجاب کے نگران صوبائی وزراء میں ظفر محمود،جواد ساجد خان،شجاعت جاوید انجم نثار،سردارتنویر الیاس،میاں نعمان کبیر اور چوہدری فیصل مشتاق بھی اثاثوں کی تفصیلات جمع نہ کرا سکے۔
سندھ کابینہ کے نگران وزراءمیں جنید شاہ،سعدیہ ورک اور سیمن جون دینیل جبکہ خیبرپختونخواہ کابینہ کے نگران وزراء میں عبدالروف خان،ثنااللہ،مقدس اللہ،محمد راشد خان اور جسٹس ریٹائرڈ اسد اللہ خان اور بلوچستان کابینہ کے نگران وزرا میں عنایت اللہ کاسی اور خرم شہزاد نے تفصیلات جمع نہیں کرائے۔