”جن کو سزا ہونی چاہیے تھی وہ بری ہورہے ہیں“



اسلام آباد( 24نیوز )خبر ہے کہ چیئرمین تحریک انصاف کو ایس ایس پی تشدد کیس میں بری ہوگئے ہیں صرف عمران خان ہی نہیں ان کے ساتھی بھی چھوٹ گئے ہیں اس موقع پر عمران خان نے کہا کہ تحریک انصاف جب اقتدار میں آئے گی تو سیاسی رہنماوں کے خلاف قانون کے غلط استعمال کو ختم کرے گی۔

پی ٹی آئی چیئرمین نے سندھ اور پنجاب کی صوبائی حکومتوں پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ یہاں کوئی قانون نہیں ہے، سندھ میں راو¿ انوار ہے اور پنجاب میں عابد باکسر ہے، اس سے پہلے نیب نے کبھی حکمران جماعت کے لوگوں کو نہیں پکڑا لیکن اب نیب نے پہلی مرتبہ اقتدار میں موجود لوگوں کے خلاف ایکشن لیا ہے، عمران خان نے نواز شریف کا شکریہ بھی ادا کر ڈالا ، کہتے ہیں میاں صاحب کا دماغی توازن ہل چکا ہے، میاں صاحب کہتے ہیں کے عمران خان کو ووٹ دینا جیسا آرمی کو ووٹ دینا ہے، شکریہ نواز شریف ۔

یہ بھی پڑھیں:عمران خان ایس ایس پی تشدد کیس میں بری

عمران خان کی بریت اور گفتگو کا سابق وزیراعظم نواز شریف نے بھی خوب جواب ڈیا ان کا کہنا ہے کہ جن کو سزا ہونی چاہیے تھی وہ بری ہورہے ہیں اور جن کو بری ہونا تھا وہ پیشیاں بھگت رہے ہیں۔

احتساب عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو میں سابق وزیراعظم نواز شریف کا کہنا تھا کہ عمران خان نہ عدالت میں پیش ہوئے اور نہ ہی ان پر مقدمہ چلا لیکن انہیں بری کردیا گیا جب کہ مجھے بیوی کی تیمارداری کرنے کے لیے جانے کی اجازت نہیں ملتی،عوام کے محافظوں پر تشدد کرنے والوں کو بری کرنے سے کیا تاثر جارہاہے۔ انہوں نے کہا کہ جن کو سزا ہونی چاہیے تھی وہ بری ہورہے ہیں جب کہ جن کو بری ہونا تھا وہ پیشیاں بھگت رہے ہیں۔

نواز شریف کا کہنا تھا کہ کہتے ہیں صاف اور شفاف الیکشن کرائیں گے تاہم اب صاف اور شفاف الیکشن والی باتوں سے دل اٹھ گیا جب کہ لاہور جلسے میں ناکامی پر عمران خان نے الیکشن کے التوا کی بات کی۔

اس موقع پر سابق وزیر اعظم کی صاحبزادی بھی پیچھے نہیں رہیں انہوں نے صحافی کی جانب سے عمران خان کے بری ہونے کے سوال پر مریم نواز سے جب سوال کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ اوپر سے حکم آیا ہوگا۔

احمد علی کیف

Urdu Content Lead