شریف فیملی کیخلاف نئی جے آئی ٹی بنانے کا حکم آگیا


اسلام آباد( 24نیوز )سپریم کورٹ نے سانحہ ماڈل ٹاﺅن کی تحقیقات کیلئے نئی جے آئی ٹی بنانے کا حکم دے دیا۔

سپریم کورٹ میں سانحہ ماڈل ٹاﺅن کیس کی سماعت جاری ہے، چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں پانچ رکن بنچ مقدمے کی سماعت کر رہا ہے، چیف جسٹس ثاقب نثار نے طاہرالقادری سے استفسارکیا کہ یہ کیس آپ نے کرنا ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ اس میں قانونی معاملات ہیں، طاہرالقادری نے عدالت کو بتایا کہ ساڑھے چارسال سے انصاف نہیں ملا،شہدا ءکے ورثا میرے پاس آکرروتے ہیں،طاہرالقادری عدالت میں آبدیدہ ہوگئے۔

جسٹس آصف کھوسہ نے کہا کہ آپ کی درخواست پر ہی جے آئی ٹی بنی، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ کیا آپ نے جے آئی ٹی پر کوئی اعتراض کیا،طاہرالقادری نے کہا کہ ہم نے تحریری اعتراضات کئے تھے، چیف جسٹس نے کہا کہ زخمی سے زیادہ بہترگواہ کوئی نہیں ہوسکتا۔

طاہرالقادری نے عدالت کو بتایا کہ ہمارے 8 سے 10 ہزار لوگ گرفتار کیے گئے، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ یہ اس صورتحال میں ہوا جب آپ نے دھرنا دیا،آپ کے لوگوں نے عدالت پر پھٹی ہوئیں قمیضیں لٹکائیں،آپ کے لوگوں نے عدالت کی تکریم میں کمی کی۔طاہرالقادری نے کہا کہ ایسا ہوا ہے تومیں معذرت خواہ ہوں، چیف جسٹس نے کہا کہ یہ بات ثابت بھی ہوسکتی ہے۔

سپریم کورٹ نے وکلاءکے دلائل سننے کے بعد نئی جے آئی ٹی بنانے کا حکم دے دیا۔