قانون کی طالبہ پر قاتلانہ حملہ کرنے والے ملزم کو لاہور  ہائیکورٹ نے بری کر دیا


لاہور(24نیوز)  ہائیکورٹ نے قانون کی طالبہ خدیجہ صدیقی پر حملہ کرنے والے ملزم کو بری کر دیا، ملزم شاہ حسین نے سیشن کورٹ کے فیصلے کے خلاف لاہور ہائیکورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کے جسٹس سردار احمد نعیم نے فریقین کے وکلاء کی بحث کے بعد مختصر فیصلہ سنایا مجرم شاہ حسین نے سیشن عدالت کے فیصلے کے خلاف لاہور ہائیکورٹ می‌ اپیل دائر کی تھی۔ مجرم شاہ حسین نے پانچ سال قید کی سزا کے خلاف ہائیکورٹ سے رجوع کر رکھا تھا گزشتہ برس ٹرائل کورٹ نے ملزم شاہ حسین کو سات سال قید کی سزا سنائی تھی اس فیصلے کے خلاف ملزم کے وکلا نے سیشن عدالت سے رجوع کیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:افتخار محمد چوہدری کا چیف جسٹس کے نام خط

  جس پر سیشن عدالت نے سات سال سے سزا کم کر کے پانچ سال کر دی تھی مجرم پر قانون کی طالبہ خدیجہ صدیقی پر چھریوں کے 23 وار کرکے شدید زخمی کرنے کا الزام تھا۔گزشتہ برس اس وقت کے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ نےاس کیس کا ایک ماہ  میں فیصلہ کرنے کا حکم دیا تھا، چیف جسٹس کے حکم پر جوڈیشل مجسٹریٹ مبشر حسین نے ایک ماہ میں اس کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے مجرم کو سات سال قید کی سزا سنائی تھی۔

پڑھنا نہ بھولیں:کمرۂ عدالت میدان جنگ بن گیا، جج کی موجودگی میں وکیل گتھم گتھا، گالیاں دیتے رہے

 عدالتی فیصلہ کے بعد قانون کی طالبہ خدیجہ صدیقی کے وکیل بریسٹر حسان نیازی نے ہائیکورٹ کے فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا عندیہ دے دیا انہوں نے کہا کہ وہ ہائیکورٹ کے فیصلہ کو سپریم کورٹ میں چیلنج کریں گے کیونکہ ٹرائل کورٹ نے تمام گواہان کے بیانات قلمبند ہونے اور فرانزک سائنس کی روپورٹ کے بعد ملزم کو سات سال کی سزا سنائی تھی۔