سینیٹ انتخابات میں پہلی بار منتخب ہونے پر کرشنا کماری کا اہم بیان


 کراچی(24نیوز) پاکستان میں ہونے والے سینیٹ کے انتخابات میں ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی اور اقلیتی ہندو مذہب سے تعلق رکھنے والی کرشنا کماری کو منتخب کیا گیا ہے

صوبہ سندھ کے صحرائی علاقے تھر کے ڈسٹرکٹ نگر پارکر کے ایک چھوٹے سے گاؤں سے تعلق رکھنے والی کرشنا کماری کولھی کی حمایت پیپلز پارٹی کی تمام قیادت نے کی تھی۔

کرشنا کماری نے2013کے دوران سندھ یونیورسٹی سے سوشیالوجی میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی تھی لیکن تعلیم کے ساتھ ساتھ انہوں نے تھر کے غریب لوگوں کی مدد کے لیے فلاحی اور سماجی سرگرمیاں بھی جاری رکھی ہوئی تھیں۔ اس وقت اڑتيس سالہ کرشنا کماری کے انتخاب کو نہ صرف سوشل میڈیا بلکہ پاکستان کے حریف ملک بھارت میں بھی سراہا جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔کرشنا کماری، تھر ننگر پارکر کی سینیٹ کی پہلی خاتون امیدوار
 پاکستان میں ہونے والے سینیٹ کے انتخابات میں پہلی مرتبہ منتخب ہونے پر کرشنا کماری کے کہا ہے کہ سینیٹر بننے والی پہلی ہندو خاتون کرشنا کماری کوہلی کہتی ہیں انہیں سینیٹر منتخب ہونے پر فخر ہے۔ پیپلزپارٹی کی شکر گزار ہوں۔