نیا پاکستان ہاؤسنگ سکیم سے متعلق اہم معلومات

نیا پاکستان ہاؤسنگ سکیم سے متعلق اہم معلومات


اسلام آباد(24نیوز) نیا پاکستان ہاؤسنگ سکیم میں گھروں کی خواہش رکھنے والے سن لیں، مکان کی قیمت کا کم سے کم 20 فیصد پہلے اداکرنا لازمی ہو گا ، گھر ان کو ہی مل سکے گا جو اس کی قیمت ادا کر سکیں گئے ۔

نیا پاکستان ہاوسنگ پراجیکٹ کے چیئرمین ضیغم محمود رضوی اور پی ٹی آئی کے دیگر عہدیداروں نے اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ منصوبے کے تحت ملک میں سالانہ دس لاکھ اور پانچ سال میں پچاس لاکھ گھر تعمیر کیئے جائیں گے۔ 80 فیصد سے زیادہ گھر نجی شعبہ تعمیر کرے گا۔

صوبائی وزیرہاوسنگ محمود الرشید نے بتایا کہ فیصل آباد میں پائلٹ پراجیکٹ شروع کرنے کے علاوہ پنجاب کے چھ دیگر اضلاع میں یکم جنوری تک گھروں کی تعمیر شروع کر دی جائے گی۔ وزیراعظم عمران خان خود افتتاح کریں گے۔

پی ٹی آئی رہنما فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ جس کے پاس اپنی زمین ہے وہ 6 لاکھ کا قرضہ لے سکتا ہے لیکن انہوں نے یہ بھی بولا کہ 50 ہزار سے زائد آمدن والا گھرانہ ہی اس سکیم سے مستفید ہو سکتا ہے۔

پی ٹی آئی رہنماوں کا مزید کہنا تھاکہ ہاوسنگ منصوبہ نان پرافٹ نہیں ہوگا بلکہ بلڈرز کو منافع کمانے کا حق حاصل ہوگا۔ آباد تنظیم کے ایک ہزار ممبرز نے ہاوسنگ منصوبے میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کا اعلان کیا ہے۔ منصوبے سے 60 لاکھ لوگوں کو روزگار بھی ملے گا۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔