’’سی ڈی اے کو پہلا ایکشن وزیراعظم کے خلاف لینا چاہیے‘‘

’’سی ڈی اے کو پہلا ایکشن وزیراعظم کے خلاف لینا چاہیے‘‘


24 نیوز : سپریم کورٹ بنی گالہ تجاوزات اور جگہیں لیز پر دینے سےمتعلق وفاق اور چیرمین سی ڈی اے سے 16 اکتوبر تک جواب طلب کرلیا، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ سی ڈی اے کو پہلا ایکشن وزیراعظم کے خلاف لینا چاہیے۔


تٖصیلات کے مطابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے بنی گالہ تجاوزات کیس کی سماعت کی،سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عمران خان درخواست گزار ہیں،ریگولر کرانے کے لیے پہلا قدم اٹھائیں ، وزیراعظم کے وکیل بابراعوان بولے کہ بنی گالا کا گھر ریگولر کرانے کے لیے سی ڈی اے کے پاس جائیں گے، چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ سی ڈی اے کے پاس آپ کیا لے کر جائیں گے؟ کیا وہ دستاویزات لے کر جائیں گے جن میں نقشے کا کوئی ثبوت نہیں ،سی ڈی اے کو سب سے پہلا ایکشن وزیراعظم کے خلاف لینا چاہیے۔


ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالت نے بتایا کہ بارہ کلومیٹر دیوار بنانا تھی،چار کلومیٹر بنا لی، فروری 2019 تک مکمل کر لی جائے گی،چیرمین سی ڈی اے نے عدالت کو بتایا کہ لیز پر دیے گئے 11 سائیٹس میں سے 2 ٹھیک ہیں، باقی کچھ کو نوٹس جاری کر دیے ہیں،عدالت نےچیرمین سی ڈی اے کو خود معائنہ کرکے رپورٹ 16 اکتوبر تک جمع کرنے کا حکم دیا۔


سماعت کے دوران کورنگ نالہ تعمیرات گرانے کی متاثرہ خاتون عدالت میں رو پڑی، خاتون نے کہاکہ شوہر کو کینسر، بیٹا چھوٹا ہے کہاں جاؤں، میں قبضہ مافیا نہیں، شاملات میں گھر بنایا،چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ آپ عدالتی فیصلے پرنظرثانی درخواست دائر کریں۔ چیف جسٹس کا مزید کہنا تھا کہ  جنہوں نے غیر قانونی تعمیرات کیں ان سے جرمانے لیے جائیں،حکومت اپنے جرمانے بھی ادا کرے اور دوسرے لوگوں سے بھی لے،گھر ریگولرائز کرانے کے لئے سب سے پہلے عمران خان کوفیس ادا کرنا ہوگی۔