کوشش ہے وسائل میں رہتے ہوئے پانی کے مسئلے کو حل کروں: وزیر اعلیٰ سندھ

کوشش ہے وسائل میں رہتے ہوئے پانی کے مسئلے کو حل کروں: وزیر اعلیٰ سندھ


کراچی (24نیوز) سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں آبی آلودگی کیس،عدالت نے سندھ حکومت کو صاف پانی کی فراہمی اور سیوریج کی ٹریٹمنٹ سے متعلق مربوط پلان 15 روز میں جمع کرانے کا حکم دےدیا، وزیر ِ اعلیٰ سندھ نے کہا کوشش ہے کہ وسائل میں رہتے ہوئے پانی کے مسئلے کو حل کروں چیف جسٹس نے عدلیہ کا کاندھا استمعال کرنے کی بھی پیشکش کردی۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سندھ میں آلودہ پانی کے کیس کی سماعت ہوئی تو،طلبی پر وزیر ِ اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ عدالت کے سامنے پیش ہوئے، چیف جسٹس نے کہا کہ بلاول بھٹو میرے بچوں کی طرح ہیں خواہش تھی کہ وہ بھی یہاں ہوتے اور صورتحال دیکھتے ، سندھ کو آلودہ پانی سے نجات نہ دلائی تو اپنے بچوں کو کیا مستقبل دیںگے,جسٹس فیصل عرب نے ریمارکس دیئے کہ پیپلز پارٹی کی پچھلی حکومت میں کوئی معاملہ عدالت تک نہیں آیا۔

وزیر ِ اعلیٰ سندھ نے کہا کہ منتخب ہونے کے بعد طے کیا تھا کچھ مثالیں قائم کروں گا،سمت درست کرنے کی کوشش کررہا ہوں، یقین دلاتا ہوں آپ کو کام نظر آئے گا،عدالت سے کچھ وقت دینے کی استدعا ہے، وزیراعلی سندھ سندھ بھر میں 953 اسکیمز غیر فعال ہیں, میں آپ کو قابل عمل پلان بنا کردوں گا اور عمل بھی کرکے دکھاؤں گا,چیف جسٹس نے کہا کہ وزیراعلی سندھ کی حیثیت سے عدالت کو حلف نامہ لکھ کر دینا ہوگا، وزیر ِ اعلیٰ سندھ نے کہا کہ ہم حکمت عملی، طریقے، مالیات وسائل سے متعلق عدالت کو ٹائم فریم دے دیں گے، آپ کے جملے اخبار میں پڑھے، کہ یہ کام ہونا ہے، کہتا ہوں کام ضرور ہوگا،دریا سندھ میں گرنے والے گندے پانی کو صاف کرنے کے لیے ساڑھے تین ارب چاہیں، وزیر ِ اعلیٰ سندھ نے چیف جسٹس سے کہا کہ آپ سب کچھ کہہ بھی رہیں، اور یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ کہنا نہیں چاہتا، مراد علی شاہ کے جملے پر عدالت ججز نے بھی قہقہہ لگایا،مراد علی شاہ نے کہا کہ 6ماہ کی مدت میں یہ مسائل حل نہیں ہوسکتے، پانی کی قلت کے باعث بدین اور ٹھٹہ تباہی ہورہی ہے، وزیر ِ اعلیٰ سندھ نے کہا کہ عدالتوں کے بعض فیصلے ایگزیکٹو کے کام کو متاثر کر رہے ہیں،چیف جسٹس نے کہا کہ آپ مسائل کے حل کے لئے ہمارا کندھا استعمال کریں۔

وزیر ِ اعلیٰ سندھ نے جواب دیا کہ عوام کے ووٹ سے منتخب ہوئے ہیں، جو بہت مضبوط کندھے ہیں،چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ وزیر ِ اعلیٰ صاحب شہریوں کی جان ٹینکرز سے چھڑوادیں،،عدالت نے آبی آلودگی سے متعلق سندھ حکومت سے 15 روز میں مربوط پلان طلب کرلیا،جبکہ محمودآباد ٹریٹمنٹ پلانٹ کی زمین رہائشی مقاصد کے لئے الاٹ کرنے پر سیکریٹری بلدیات سے مفصل رپورٹ طلب کرلی ہے۔