آپریشن خیبرون ، بعض سرکاری ادارے وملازمین دوبارہ خیبرایجنسی منتقل نہ ہوسکے


پشاور(24نیوز) آپریشن خیبرون کے بعد پشاورمنتقل ہونیوالے بعض سرکاری ادارے وملازمین دوبارہ خیبرایجنسی منتقل نہ ہوسکے ،باڑہ جی پی اواورنیشنل بینک کی بندش کے باعث شہریوں کی مشکلات بڑھ گئیں۔

تفصیلات کے مطابق طویل دہشتگردی اورکرفیو کا شکارباڑہ خیبرایجنسی قیام امن کے بعدفاٹا انتظامیہ کی نااہلی اورناقص گورننس کے بعد سنبھل نہ سکا۔2009میں دہشتگردی عروج پرچلے جانے کے بعد باڑہ بازارکو بند کرادیاگیا جس کے باعث عوامی اورسرکاری اہلکاروں کو پشاورآنا پڑا تاہم پاک فوج کیجانب سے آپریشن خیبرون کے بعدباڑہ بازاردوبارہ کھول دیاگیا لیکن اب بھی کئی دفاتربندپڑے ہیں۔

اہل علاقہ کیمطابق باڑہ جی پی اواورنیشنل بینک کی بندش کے باعث ان کو روزانہ مشکلات سے گزر کرآنا پڑرہاہے،عوام کا حکومت سے مطالبہ ہے کہ وہ قیام امن کے بعد باڑہ کی بحالی کیساتھ وہاں کے ملازمین کودوبارہ پشاورسے باڑہ منتقل کیاجائے تاکہ عوام کے مشکلات میں کمی آئے۔