موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کیخلاف حکومتی اپیل مسترد

 موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کیخلاف حکومتی اپیل مسترد


اسلام آباد( 24نیوز ) سپریم کورٹ نے موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کی اجازت کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا مسترد کر دی،عدالت نے وفاقی حکومت کی اپیل پر فریقین کو نوٹس جاری کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کی اجازت کیخلاف حکومتی اپیل پر جسٹس مشیر عالم کی سربراہی تین رکنی بینچ  نے سماعت کی،جسٹس منصور علی شاہ نے استفسار کیا کہ کیا قانون میں موٹروے پر موٹرسائیکل چلانے پر پابندی ہے؟ ایڈیشنل اٹارنی جنرل عامر رحمان نے جواب دیا کہ نیشنل ہائی وے سیفٹی آرڈیننس کے مطابق موٹروے پر موٹرسائیکل نہیں چل سکتی۔

جسٹس منصور علی شاہ نے ریماکس دیئے کہ قانون کے مطابق پابندی کا نوٹیفکیشن وجوہات کیساتھ جاری کرنا لازم ہے، دنیا بھر کی موٹر ویز پر موٹرسائیکلز چلتی ہیں، اگر حکومت نے پابندی عائد کی ہے تو نوٹیفکیشن دکھائیں،ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ پابندی کیلئے باضابطہ نوٹیفکیشن جاری نہیں ہوا،موٹروے کے انٹری پوائنٹس پر پابندی کے سائن بورڈ لگائے گئے ہیں۔

موٹرسائیکل پرسیفٹی اور سکیورٹی کی وجہ سے پابندی عائد کی،چائنہ,انڈونیشاء اور فلپائن میں موٹرسائیکلز موٹروے پر لانے پر پابندی ہے،موٹرسائیکلز کو 2010 میں تین سال کیلئے اجازت دی گئی تھی،اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کے مطابق موٹروے پر چنگ چی بھی چل سکتی ہے، ہائی ویز پر انٹری پوائنٹ زیادہ ہونے کے باعث پابندی ممکن نہیں۔

جسٹس منصور علی شاہ نے ریماکس دئے کہ ہائی وے پر موٹرسائیکل زیادہ خطرناک ہو سکتی ہے، کیا ہائی ویز پر حکومت کو شہریوں کی سیفٹی کی پرواہ نہیں؟جسٹس مشیر عالم نے ریماکس دیئے کہ حکومت کو اختیار ہے موٹروے پر موٹرسائیکلز کی آمد کو ریگولیٹ کرے۔

عدالت نےموٹروے پر موٹرسائیکل چلانے کی اجازت کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے سماعت دس دن کیلئے ملتوی کر دی۔