العزیزیہ ریفرنس، مریم نواز مبینہ ویڈیو منظرعام پر لے آئیں



لاہور(24نیوز)ملکی سیاسی منظرنامےمیں بھونچال آگیا، مریم نوازاحتساب عدالت کےجج ارشد ملک کی مبینہ وڈیو منظرعام پر لے آئیں۔

مسلم لیگ (ن) نے پریس کانفرنس میں نواز شریف کو العزیزیہ ریفرنس میں سزا سنانے والے احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کی ویڈیو دکھائی جس میں انہوں نے ن لیگ کے ہمدرد ناصر بٹ کو اپنے گھر پر بلاکر ملاقات کی۔ ارشد ملک نے ویڈیو میں مبینہ طور پر کہا کہ نواز شریف کو سزا سنانے کے بعد میرا ضمیر ملامت کررہا ہے اور مجھے ڈراؤنے خواب آتے ہیں، میں اس کا ازالہ کرنا چاہتا ہوں، نواز شریف پر نہ ہی کوئی الزام ہے نہ ہی کوئی ثبوت ہے، میں نے میاں صاحب سے زیادتی کی۔ نوازشریف پرکیس بنتاہی نہیں تھا منی لانڈرنگ ہوئی ہی نہیں، سزا مجبوری میں دی، فیصلےکےبعد ضمیر ملامت کررہاہے۔

مریم نواز   کا کہنا تھا کہ نوازشریف کوسزادی نہیں دلوائی گئی، مقدمات شروع ہونےسےپہلےفیصلے ہوچکے تھے۔یہ احتساب نہیں انتقام تھا اور نوازشریف یہ جانتےتھے۔ کوئی بھی الزام ثابت نہیں ہواپھربھی سزاہوگئی۔ کسی نے کوئی گھٹیاحرکت کی تواس سےبڑے ثبوت ہیں۔

مریم نواز نے خبردار کیا کہ آج کےبعدمجھےبھی خطرہ ہے۔وعدہ کیاتھانوازشریف کےلیےآخری حدتک جاؤں گی۔وعدہ کیاتھانوازشریف کومرسی نہیں بننےدوں گی۔پاکستانی عوام کے سامنے سوال چھوڑ رہی ہوں،  کب تک سیاستدانوں کے خلاف ایسی شرمناک کارروائی ہوتی رہے گی ۔ ہمارے رہنماؤں کے خلاف کچھ نہیں ملتا توکہتے ہیں، منشیات اور سائیکل چوری ڈال دو،  کسی نے کوئی گھٹیا حرکت کی تو اس سے بڑے ثبوت موجود ہیں۔مریم نوازکہتی ہیں کہ سب جانتےہیں عمران خان کی کیااوقات ہے۔عمران خان سیاسی میدان میں آکرنوازشریف کا مقابلہ کریں۔ 

پریس کانفرنس میں شاہد خاقان عباسی اور  احسن اقبال بھی موجود تھے۔ شہباز شریف نے کہا کہ نواز شریف کو نیب ریفرنس میں سزا بدترین ناانصافی ہے، امید ہے انہیں ضرور انصاف ملے گا۔

مریم نواز نےمزید کہا کہ پاناما سے اقامہ تک ریفرنسز کا سفر آج بھی جاری ہے، انتقام پر مبنی فیصلے سنائے گئے، نوازشریف پر لگنے والے الزامات کے ثبوت نہیں ملے لیکن پھر بھی انھیں سزا ہوئی، مفروضوں اور انتقام پر مبنی فیصلے سنائے گئے، نواز شریف پر مقدمات شروع ہونے سے پہلے ہی فیصلے ہوئے، نواز شریف کی بے گناہی کی غیبی مدد آئی ہے، سزا دینے والا خود بول اٹھا کہ نواز شریف کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔