پرویز مشرف سنگین غداری کیس، عدالت نے سابق صدر کو سوالنامہ بھیج دیا

 پرویز مشرف سنگین غداری کیس، عدالت نے سابق صدر کو سوالنامہ بھیج دیا


اسلام آباد(24نیوز) پرویز مشرف سنگین غداری کیس کا معاملہ, اسلام آباد کی خصوصی عدالت نے 342 کے بیان کیلئے سابق صدر کو سوالنامہ بھجوا دیا ہے .

سوال نامے میں 2007 کی ایمرجنسی لگانے سمیت 26 سوالات شامل کئے گئےہیں. سابق صدر سےپوچھا گیا ہے کہ ‏کیا یہ درست ہے آئین معطل کر کے آپ نے آئین پامال کیا اور یوں آپ سنگین غداری کے مرتکب ہوئے؟ تمام اقدامات آپ نے بغیر مجاز حکام کے مشورے کے انفرادی طور پر اٹھائےاور آپ کے ان تمام اقدامات کو کبھی بھی کسی مجاز فورم نے جائز قرار نہیں دیا ؟اور نہ ہی کوئی استثا حاصل ہوا۔ ‏کیا یہ درست ہے ججز حلف کےحکم نامے کے بعد اعلٰی عدالتوں کے ججوں سے دوبارہ حلف بھی لیا؟‏کیا آپ نے15 دسمبر 2007 کو بطور صدر ایمرجنسی نفاذ کےحکم ،عبوری آئین کافرمان منسوخ کرنےکاحکم نامہ جاری کیا،‏کیا یہ درست ہے 20 نومبر 2007کو بطور صدر مملکت صدارتی حکمنامہ نمبر 5 جاری کیا ؟ ججوں سے ایمرجنسی نفاذکےعبوری آئینی فرمان 2007 کے مطابق فرائض انجام دینےکاتقاضہ کیاگیا؟ صدارتی فرمان سے بہت پہلے چیف جسٹس آف پاکستان، ججوں کوہٹا دیاگیا تھا؟‏خود کو بطور صدر مملکت آئین میں ترمیم اور بنیادی انسانی حقوق کی معطلی کا اختیار دے دیا.

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔