بھیک مانگتی خواتین اور بچوں کی تعداد میں اضافہ

بھیک مانگتی خواتین اور بچوں کی تعداد میں اضافہ


( 24 نیوز ) اسلام آباد سمیت ملک کے دیگر شہروں میں بھیک مانگنے والی خواتین اور بچوں کی تعداد میں اضافہ ہونے لگا، بھیک سے روک تھام کے لیے 80 کے قریب قانون بنائے گئے جن پر عمل نہ ہوسکا۔

اللہ کے نام پر دے دو، میرے بچے بھوکے ہیں، یہ الفاظ اکثر سڑکوں پر مانگنے والوں کے ہوتے ہیں جنہوں نے ہاتھوں میں ننھے بچے اٹھا رکھے ہوتے ہیں،اسلام آبادمیں جگہ جگہ سڑکوں پربھیک مانگتی خواتین کا کہنا ہے کہ روزگار نہ ہونے اور مجبوری میں بھیک مانگتے ہیں۔ بچوں کے ساتھ زیادتی کے حوالے سے سینیٹ کمیٹی کے اجلاس میں انکشاف کیا گیا کہ بچوں کے تحفظ اور حقوق کے حوالے سے 80 کے قریب قانون بھی بنائے گئے ہیں جن پر عمل نہیں ہورہا۔

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی میں پولیس حکام نےبتایا کہ اب تک 1400 بچے بازیاب کرائےگئےہیں جبکہ باقی بچوں اور ان کے والدین کے لیے ایکشن لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔