بڑے شہر کے بڑے مسائل،حل کے لیے بڑی رقم بھی درکار


کراچی(24نیوز) ورلڈ بینک نے کراچی کو میگا سٹی بنانے کی حکمت عملی تجویز کر دی، شہر کے مسائل کے حل کیلئے 10 ارب ڈالر کی ضرورت ہے، وسائل کی بہتری کیلئے پراپرٹی ٹیکس ایک اہم ذریعہ ہے۔

تفصیلات کے مطابق کچرا،سیوریج، ٹوٹی پھوٹی سڑکیں،پینے کا پانی، پبلک ٹرانسپورٹ،  ٹریفک جام اور بہت کچھ جس کی وجہ سے شہر کراچی میں رہنا مشکل ہوتا جارہا ہے۔ جہاں نظر جاتی ہے وہاں مسائل ہی مسائل دیکھائی دکھتے ہیں۔ کراچی کی انتظامیہ کو تو ہوش آیا نہیں لیکن ورلڈ بینک نے کراچی کو بہتر اور میگا سٹی بنانے کی حکمت عملی بنا لی۔131 صفحات پر مشتمل ریسرچ میں کراچی کو رہنے کے قابل بنانے کے لئے مختلف پہلو پر غور کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں:دودھ ،پٹرول بنے بھائی بھائی،انتظامیہ نے کارروائی کرنے کا عندیہ دے دیا
    

رپورٹ کے مطابق کراچی کو رہنے کے قابل اور میگا سٹی بنانے کیلئے 10 سال میں 10 ارب ڈالرز کی ضرورت ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ کے جدید سہولیات فراہم کرنے کی اشد ضرورت ہے اور شہر کے کچرے کو ری سائیکل کرکے آمدنی حاصل کی جاسکتی ہے۔

ورلڈ بینک کی رپورٹ میں مزید بتایا گیا کراچی کہ انتظامی اداروں میں باہمی رابطے کا فقدان ہے اور شہر کی ضروریات کے لئے عوامی فائننس بھی محدود ہے۔کراچی اور سندھ کے دیگرشہروں میں پراپرٹی ٹیکس فائننس کا ایک اہم ذریعہ ہے جبکہ ٹیکس وصولی پنجاب کے مقابلے میں 4 گناہ کم ہے۔