کپتان، زرداری دل ملانے لگے، میاں صاحب کی تنہائی واضح ہوگئی


جہلم (24 نیوز) نواز شریف کا جہلم جلسہ، نوازشریف کا کہنا ہے کہ عمران خان صاحب ہمارا مقابلہ تمہارے ساتھ نہیں۔  میٹرو کو جنگلا بس کہنے والے اب پشاور میں جنگلہ بس بنا رہے ہیں۔

 جہلم میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے نواز شریف کا کہنا تھا کہ آج نیب کورٹ میں میری 62 ویں پیشی تھی، میں پیشی کے بعد آپ کے پاس آیا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پوری  کوشش کی جارہی ہے کہ نواز شریف کو جیل بھیج کر قید کردیا جائے۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ  ہمارے اگلے 70 سال پچھلے 70 سالوں سے اچھے ہوں گے، آئندہ کسی کو اجازت نہیں دیں گے کہ وہ ووٹ کی بےحرمتی کرے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: جو کام حکومت کو کرنا چاہیے تھا وہ چیف جسٹس کررہے ہیں:عمران خان

وزیر داخلہ احسن اقبال پر حملہ کا ذکر کرتے ہوئے انکا کہنا تھا کہ حملہ کوئی معمولی واقعہ نہیں ہے۔ نواز شریف کا کہنا تھا کہ سراج الحق نے وزیر اعلیٰ کے پی کے پرویز خٹک سے پوچھا کہ سنجرانی کو ووٹ کیوں دینا ہے؟ انہوں نے کہا ووٹ دینا ہے اوپر سے حکم آیا ہے، وزیراعلیٰ کے پی کے نے وضاحت کی اوپر سے مراد بنی گالا ہے۔

یہ خبر پڑھیں: انتخابات میں حصہ لینے والے امیدوار ہوجائیں تیار، کاغذات نامزدگی کی اسکروٹنی مزید سخت

نواز شریف نے کہا کہ عمران خان صاحب ہمارا مقابلہ تمہارے ساتھ نہیں، کبھی گیدڑ بھی شیر کا مقابلہ کرتے ہیں؟ عمران خان تم کیا نواز شریف کے شیروں کا مقابلہ کرو گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان تو کہتے تھے کہ زرداری سے کبھی ہاتھ نہیں ملا سکتے، اب تو آپ دل ملا رہے ہیں۔

 یہ پڑھنا مت بھولئے: احسن اقبال پر حملہ،نواز شریف نے اہم انکشاف کردیا

نواز شریف نے کہا کہ عمران خان میٹرو کو جنگلا بس کہتے تھے، اب پشاور میں جنگلا بس بنارہے ہیں جو ان سے بن نہیں پارہی بلکہ کرپشن کا انبار لگا ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پشاور کا حال بھی وہی ہے جو آج کراچی کا ہے۔ کراچی میں برا حال ہے سڑکیں ٹوٹی ہوئی ہیں۔ خیبرپختونخوا میں پرانا کے پی کے ہی نظر آیا، سڑکیں ٹوٹی پھوٹی، اسکول تباہ حال ہیں۔

یہ بھی لازمی پڑھیں: تربیلا ڈیم اور چشمہ بیراج خالی، ملک کوجلد لوڈ شیڈنگ کے بڑے بحران کا سامنا ہوگا

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ مجھ پر کسی کرپشن اور لوٹ مار کا الزام نہیں، میرا قصور یہ ہے کہ میں نے بیٹے سے تنخواہ نہیں لی۔ انہوں نے کہا کہ 2018 کا الیکشن، انتخاب نہیں ریفرنڈم ہوگا، ہمیں پاکستان کو تبدیل کرنا ہے قائداعظم والا پاکستان بنانا ہے۔