"قرضوں میں اضافہ، ایل این جی کی در آمد بند کردی گئی"

10:05 AM, 7 Sep, 2018

وقار نیازی

اسلام آباد(24نیوز) گردشی قرضوں میں اضافہ کے بعدایل این جی کی درآمدبند کردی گئی، ایل این جی پاورپلانٹس کی پیداوارسسٹم سے نکل گئی،بجلی کا شارٹ فال 5ہزارمیگاواٹ سے تجاوزکرگیا۔
وہی ہوا جس کا ڈر تھا، مہنگی ایل این جی کی درآمد سے سرکلر ڈیٹ بڑھ گیا کیونکہ پاور پلانٹس ایل این جی خرید کر بل ادا نہیں کرتے۔گردشی قرضے بے قابو ہونے کے باعث وزارت توانائی نے ایل این جی پاور پلانٹس کو گیس کی فراہمی روک دی ہے۔ حویلی شاہ بہادر،بلوکی اور بھیکی بجلی گھروں سے 3600 میگاواٹ بجلی سسٹم سے نکل گئی ہے۔
وزارت توانائی کے ذرائع بتاتے ہیں کہ اس وقت پن بجلی ذرائع سے 6ہزار200میگاواٹ بجلی پیدا ہو رہی ہے۔ سرکاری تھرمل پاور پلانٹس 2ہزار 650 میگاواٹ بجلی پیدا کر رہے ہیں اور نجی شعبے کے بجلی گھروں کی پیداوار 10ہزار600 میگاواٹ ہے۔بجلی کی مجموعی پیداوار تو 19ہزار 450 میگاواٹ ہے لیکن طلب 24 ہزار 900 میگاواٹ ہو چکی ہے۔ پاور سسٹم کو 5ہزار 450میگاواٹ شارٹ فال کا سامنا ہے جس کی وجہ سے دیہی علاقوں میں 12 گھنٹے اور شہروں میں 8 گھنٹے تک بجلی کی لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے۔
وزارت توانائی کے ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر صورتحال یہی رہی تو آئندہ دنوں میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ مزید بڑھنے کا امکان ہے۔

مزیدخبریں