جج ویڈیو اسکینڈل میں ملوث تینوں ملزمان بری

جج ویڈیو اسکینڈل میں ملوث تینوں ملزمان بری


اسلام آباد(24نیوز) ارشد ملک جج ویڈیو سکینڈل میں ملوث ناصر جنجوعہ سمیت تینوں ملزمان کو عدالت نے عدم شواہد کی بنیاد پر بری کردیا۔ ایف آئی اے نے رپورٹ میں تینوں ملزمان ناصر جنجوعہ ، خرم یوسف اور غلام جیلانی کو ڈسچارج کردیا۔

اسلام باد کی مقامی عدالت نے احتساب عدالت کے سابق جج ارشد ملک کے ویڈیو سکینڈل میں نامزد تین ملزمان کو بری کردیا۔مقامی جوڈیشل مجسٹریٹ ثاقب جواد کی جج ویڈیوسکینڈل کیس کی سماعت ہوئی جس دوران ایف آئی اے کے تفتیشی افسر نے تحقیقاتی رپورٹ عدالت میں جمع کرائی۔ ایف آئی اے رپورٹ میں عدم شواہد کی بنیاد پر گرفتار ملزمان ناصر جنجوعہ ، خرم یوسف اور غلام جیلانی کو کیس ے ڈسچارج کردیاگیا، ایف آئی اے نے عدالت کو بتایا کہ گرفتار تینوں ملزموں کیخلاف شواہد نہیں ملے ،عدالت چاہے تو گرفتار ملزموں کو رہا کر دے۔

ایف آئی اے کے تفتیشی افسر اور پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ تحقیقات کے دوران ملزمان کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ملا لہٰذا انہیں کیس سے بری کردیا جائے۔عدالت نے ایف آئی اے کی استدعا پر کچھ دیر کےلئے فیصلہ محفوظ کیا جو بعد میں سناتے ہوئے وفاقی تحقیقاتی ادارے کی درخواست منظور کرلی۔

اس سے قبل ایف آئی اے نے تینوں ملزمان کو سول جج جج شائستہ کنڈی کی عدالت میں پیش کیا گیا جس پر جج شائستہ کنڈی نے کیس کی سماعت سننے سے انکار کر تے ہوئے کہاکہ یں زاتی وجوہات پر کیس نہیں سننا چاہتی لہزا کیس دوسری عدالت میں منتقل کیا جا رہا ہےجس کے بعد مقدمے کو ثاقب جواد کی عدالت میں منتقل کرلیاگیا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔