امریکی صدر کے فیصلے کیخلاف چین، جرمنی اور روس ڈٹ گئے

امریکی صدر کے فیصلے کیخلاف چین، جرمنی اور روس ڈٹ گئے


واشنگٹن(24 نیوز): امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے کیخلاف روس چین اور جرمنی ڈٹ گئے۔ صورت حال پر غور کے لئے سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس آج ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ بیت المقدس کے خلاف امریکی اقدام پر روس اور چین ڈٹ گئے، چین نے بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے امریکی فیصلے کی مخالفت کر دی ہ اور کہا  کہ مشرقی یروشلم کو فلسطین کا دارالحکومت مانتے ہیں۔

روسی صدر پیوٹن نے امریکی فیصلے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایسے اقدامات خطے میں ممکنہ امن عمل میں رکاوٹ کا باعث بن سکتے ہیں۔

دوسری جانب کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو کا کہنا ہے کہ ان کا ملک مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم نہیں کرتا، سفارتخانہ بھی منتقل نہیں کریں گے۔

جرمن چانسلر انگلیلا مرکل نے کہا ہے کہ برلن حکومت مسئلہ فلسطین کے حوالے سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد کی حمایت جاری رکھے گا۔

دوسری طرف فلسطینی صدر محمود عباس کا کہنا ہے کہ فیصلے سے امریکا کا امن عمل میں ثالث کا کردار ختم ہوگیا ہے۔  امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا یہ اعلان اسرائیل کی فلسطینی سر زمین پر بالادستی کو تسلیم کرنا ہے، جس سے امن مذاکرات کو خطرہ ہو سکتا ہے، امریکہ کو ایسا کرنے کا کوئی حق نہیں۔