آسٹریلیا کے منفرد چوہے،کھاتے کیا ہیں؟

آسٹریلیا کے منفرد چوہے،کھاتے کیا ہیں؟


سڈنی(24 نیوز)آسٹریلیا میں ایسے چوہے پائے جاتے ہیں جو انسانوں کیلئے  رحمت بن گئے ہیں اور سائنسدانوں  کا مسئلہ بھی حل کردیا ہے،یہ چوہے کھاتے کیا ہیں؟اس حوالے سے بڑا انکشاف ہوا ہے۔

آسٹریلیا میں پانی کے چوہوں کی ایک قسم نے وہ کام کر دکھایا ہے جو سائنسدان کئی برس سے کرنے کی کوشش کر رہے تھے مگر ناکام تھے۔یہ چوہے کامیابی کے ساتھ اُن انتہائی زہریلے مینڈکوں ( کین ٹوڈ ) کی آبادی کو بڑھنے سے روک رہے ہیں جنھوں نے خطے کے دوسرے جانداروں کے لیے تباہی مچائی ہوئی ہے۔

جس طریقے سے یہ چوہے اپنا کام کر رہے ہیں اُس نے سائنسدانوں کو حیران کر دیا ہے۔ یہ چوہے زہریلے مینڈکوں کا جسم چیر کر احتیاط کے ساتھ صرف اُن کے کلیجہ اور دل کھاتے ہیں۔ اِن مینڈکوں کے جسم کے صرف یہی دونوں اعضاء زہریلے نہیں ہوتے۔یہ چوہے جس باریکی سے یہ آپریشن کرتے ہیں اِسے یونیورسٹی آف میلبورن کے تحقیتق کاروں نے دریافت کیا ہے۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ راکالی نامی یہ چوہے اب تک دریافت ہونے والے وہ واحد جانور ہیں جن میں کین ٹوڈ کو ہلاک کرنے کی صلاحیت موجود ہے۔

زہریلے مینڈکوں کو سنہ 1935 میں آسٹریلیا کے شمال مشرقی ساحلی علاقے میں گنے کے کھیتوں کو نقصان پہنچانے والے کیڑوں کے خاتمے کے لیے لایا گیا تھا۔

یہ جانور نئے ماحول اور علاقے کو اپنانے کے لیے مشہور ہیں۔ یہ مینڈک بڑی تعداد میں بچے پیدا کرتے ہیں اور ساٹھ کلومیٹر دور تک ہجرت کر سکتے ہیں۔

اِسی طرح یہ سنہ 2011 اور سنہ 2012 کے درمیان مغربی آسٹریلیا کے کمبرلی نامی خطے تک پہنچے۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer