کراچی سے لاہور موٹروے منصوبے کی تحقیقات ,رکاوٹ نیب افسر نکلے

 کراچی سے لاہور موٹروے منصوبے کی تحقیقات ,رکاوٹ نیب افسر نکلے


لاہور (24نیوز) کراچی سے لاہور موٹروے منصوبے کی تحقیقات میں رکاوٹ کوئی اور نہیں بلکہ نیب کے اپنے ہی اعلی افسر ملوث نکلے، سابق چئیرمین این ایچ اے اشرف تارڑ کو بچانے کے لئے ڈی جی راولپنڈی ناصر اقبال اور اعلیٰ بیورو کریٹ فواد حسن فواد کے ناموں کی گونج سنائی دینے لگی۔

تفصیلات کے مطابق ٹرانسپیرنسی انٹر نیشنل کی رپورٹ پر لاہور کراچی موٹروے منصوبے میں مبینہ بے ضابطگیوں اور بدعنوانی کی تحقیقات نیب راولپنڈی کے حوالے کی گئیں تھیں۔  جس میں چئیرمین این ایچ اے اشرف تارڑ کا نام سرفہرست تھا۔ ذرائع کےمطابق ڈی جی نیب راولپنڈی ناصر اقبال نے معاملے کو لٹکائے رکھا اور 6 ماہ بعد بھی تحقیقات کا عمل مکمل نا ہوسکا۔جس پراین ایچ اے چئیرمین اشرف تارڑ کو ناصرف کلین چٹ مل گئی بلکہ انہیں ورلڈ بنک میں اعلی عہدہ بھی مل گیا۔

علاوہ ازیں اس سارے عمل کے پیچھے فواد حسن فواد کانام بھی لیا جارہا ہے۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ فواد حسن فواد اور اشرف تارڑ کے آپس میں بڑے قریبی اور گہرے مراسم ہیں اور رسم دنیا نبھانے کے لئے اربوں کی کرپشن کو بھی خاطر میں نہیں لایا گیا۔

واضح رہے کہ موجودہ چئیرمین نیب نے اس معاملے کا ازسر نو نوٹس لیا اور نیب افسروں کے خلاف باقاعدہ انکوائری کے لئے تیاری بھی کرلی گئی ہے۔ سابق چئیرمین قمر زمان چوہدری کے دور میں نیب کے اندر ہونے والی بے ضابطگیوں اور کرپشن کی ایک لمبی فہرست بھی تیار کر لی گئی ہے۔