بلوچستان کا اگلا وزیر اعلیٰ کون ہو گا؟ نام سامنے آ گئے

بلوچستان کا اگلا وزیر اعلیٰ کون ہو گا؟ نام سامنے آ گئے


کوئٹہ (24 نیوز) بلوچستان میں ثناء اللہ زہری کے وزارتِ اعلیٰ سے مستعفی ہونے کےبعد اگلے وزیر اعلیٰ کے لیے ن لیگ کے چار ارکان کو فیورٹ قراردیا جارہا ہے۔ جے یو آئی کے نام پر بھی قرعہ نکل سکتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ثناء اللہ زہری کے استعفیٰ کے بعد ایک سیاسی باب بند ہوا تو دوسرا کھل گیا۔ اب نئے وزیراعلیٰ کے لیے جوڑ توڑ شروع ہو چکا ہے۔ ن لیگ کے چار ارکان کو اس عہدہ کے لیے فیورٹ قرار دیا جا رہا ہے۔

وزارت اعلیٰ کی دوڑ میں صالح بھوتانی کو سب سے مضبوط امیدوار سمجھا  جا رہا ہے مگر واقفان حال کا کہنا ہے کہ ثناء اللہ زہری کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کے پیچھے سب سے متحرک کردار جان جمالی کا ہے اور وہی بلوچستان کے اگلے وزیراعلیٰ ہو سکتے ہیں۔

نواب خیربخش مری کے صاحبزادے میر جنگیر مری بھی وزارتِ اعلیٰ کے مضبوط امیدوار ہیں۔ نوجوان رکن میر سرفراز بگٹی بھی اس دوڑ میں شامل ہیں۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ وزارتِ اعلیٰ ن لیگ کو ملی تو ان چاروں میں سے ہی کوئی ایک امیدوار ہو گا۔

بلوچستان کی سیاست پر نظر رکھنے والوں کا کہنا ہے کہ جے یو آئی کے ارکان نے بھی ثناء اللہ زہری کو گھر بھیجنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ اس لیے یہ بھی ممکن ہے کہ اس انعام میں جے یو آئی کے کسی رکن کو اگلا وزیر اعلیٰ چن لیا جائے۔ جے یو آئی کا یہ رکن کون ہوگا اس کا فیصلہ مولانا محمد خان شیرانی کریں گے۔