شاہد خاقان عباسی اور احسن اقبال کی حکومت پر " لفظی بمباری"



( 24نیوز ) سابق وزیراعظم شاہدخاقان عباسی نے کہا کہ نوازشریف کے فیصلے کی کوئی حقیقت نہیں،حکومت نے ویڈیوکا فرانزک کرا لیا ہے، احسن اقبال نے کہا کہ عمران خان قومی اداروں کو متنازعہ بنانے کی کوشش کررہے ہیں۔

ضرور پڑھیں:جگن@9، 20نومبر2019

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم اور سینئر نائب صدر مسلم لیگ ن شاہد خاقان عباسی کا کہناتھا کہ نیب کی حقیقت عوام کے سامنے آگئی، نیب اندھا قانون ہے ہمیشہ سیاستدانوں کیخلاف استعمال ہوا،حکومت نے ویڈیوکا فرانزک کرا لیا ہے، ن لیگ نے تحقیقات کے بعد 40 منٹ کی ویڈیو جاری کی تھی اس ویڈیو کا مقصد عوام کو احتساب کے نظام اور نیب کے اندر جو کچھ ہو رہا ہے اس کی حقیقت عوام کے سامنے رکھا ہے ویڈیو میں جج صاحب کہتے ہیں کہ یہ فیصلہ دباؤ میں کیا تھا نواز شریف کو جو سزا ملی اس کی کیا حیثیت ہے؟

ان کا کہناتھا کہ  نوازشریف کے فیصلے کی کوئی حقیقت نہیں؟ اخلاقی طور پر نواز شریف کی سزا ختم ہو چکی ہے ان عدالتوں میں کسی کو انصاف نہیں ملے گا،وزیراعظم نے کل اپنا سب سے بڑا یو ٹرن لیا کہ اس کا حکومت سے کوئی تعلق نہیں، حکومت نے اس ویڈیو کا فرانزک آڈٹ کروایا اور یہ ویڈیو بلکل درست ہے فرانزک کے بعد عمران خان نے یو ٹرن لے لیا اور جوڈیشل کمیشن کا کہہ دیا۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ پریس کانفرنس میں  جج صاحب نے اس ویڈیو سے انکار نہیں کیا، جج صاحب نے کہا کہ سیاق و سباق سے ہٹ کر بات کی، جج صاحب نے ویڈیو کا دفاع نہیں کیا، جج صاحب کو اگر رشوت اور دھمکی دی جا رہی تھی تو انہوں نے اپنے اوپر سپروائزری جج کو کیوں نہیں بتایا،ہم قومی اداروں کو سیاسی تنازعات سے باہر رکھنا چاہتے ۔

 عوام یہ سوال کر رہی ہے کہ 3 بار وزیراعظم رہنے والے شخص کے ساتھ کیا ہو رہا ہے؟ حکومت ججوں کو بلیک میل کرتی ہے اور فیصلہ کرواتی ہے، ویڈیو کے بعد اس فیصلے کی کیا حیثیت رہ گئی ہے اس کا نوٹس اعلی عدلیہ کو لینا چاہیے، ہمارے پاس ایک ویڈیو نہیں اس کے علاوہ بھی بہت سی ریکارڈنگز ہیں ججز پر دباو ڈالنے کا فائدہ صرف ایک شخص کو ہوا جس کا نام عمران خان ہے۔

ن لیگ کے سینئر رہنما احسن اقبال نے کا کہناتھا کہ عمران خان قومی اداروں کو متنازعہ بنانے کی کوشش کررہے ہیں۔