عمران خان کون سی محرومیوں کا رونا رو رہے ہیں؟


اسلام آباد(24نیوز)  تحریک انصاف کی کورکمیٹی کا اجلاس ہوا میڈیا سے گفتگو میں پارٹی سربراہ عمران خان نے کہا کہ سینیٹ میں تمام صوبوں کا حصہ برابر ہے۔

تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کا کہنا تھا کہ بلوچستان کا احساس محرومی دور کرنے کے لئے چیئرمین اس صوبہ سے ہونا چاہیے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں سب سے زیادہ قربانی دینے والے فاٹا کو سینیٹ کا ڈپٹی چیئرمین عہدہ ملنا چاہیئے۔

عمران خان نے کہا کہ انکی بیس سالہ سیاسی جدوجہد کرپشن اور مافیا کے خلاف رہی۔ انہوں نے وزیرخارجہ خواجہ آصف کے خلاف اپنے ساتھی عثمان ڈار کے مقدمہ پر اسلام آباد ہائیکورٹ کے فیصلے سے مایوسی کا اظہار کیا۔

یہ بھی پڑھیں:قائم علی شاہ عمرمیں عمران خان سے چھوٹے ہیں: سابق وزیراعلیٰ سندھ

 انہوں نے کہاکہ یہ معاملہ قومی سلامتی کا ہے۔ چیف جسٹس آف پاکستان اس کا نوٹس لیکر مقدمہ کو روزانہ کی بنیاد زیر سماعت لائیں۔

اس سے پہلے چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے اتنا بڑا فیصلہ کر کے سب کو حیران کر دیا۔ سینیٹ کی ایک دو یا تین نہیں بلکہ متعدد نشستیں وزیر اعلیٰ بلوچستان کے حوالے کر دیں۔

پڑھنا نا بھولیں:عمران خان نے طاہر القادری کی تحریک قصاص کی حمایت کا اعلان کر دیا

 انھوں نے اس حوالے سے خم ٹھونک کر فیصلہ سنا دیا ہے کہ سینیٹ کا چیئرمین بلوچستان سے ہونا چاہیے۔ ن لیگ والے جمہوریت کےنام پرلوٹ مار کرنے والے ہیں۔

یہ بھی پڑہیں:چیئرمین سینیٹ کس صوبہ سے ہونا چاہیے، عمران خان نے دو ٹوک فیصلہ سنا دیا

 یاد رہے کہ عمران خان کی شادی میڈیا کا اہم مسلہ بنی رہی چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے رواں سال کے آغاز پر یکم جنوری کی شب لاہورمیں شادی کی تھی، عمران خان کا نکاح پی ٹی آئی کورکمیٹی کے رکن مفتی سعید نے پڑھایا تھا، جب ان سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے خبر کی تصدیق یا تردید کرنے کی بجائے چپ باندھ لی۔

واضح رہے کہ مفتی سعید پی ٹی آئی کی کور کمیٹی کے رکن ہیں، 8جنوری 2015ءکو ریحام خان سے شادی کے موقع پر ان کے نکاح خواں مفتی سعید ہی تھے۔

یہ بھی پڑہیں:عمران خان کی روحانی رہنما سے تیسری شادی؟ نکاح خواں نے تردید کی بجائے چپ سادھ لی

 ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ عمران خان کے نکاح کی تقریب ڈیفنس ہاﺅسنگ اتھارٹی میں لاہورکے سیکٹروائے میں دلہن کے قریبی دوست کے گھر میں منعقد ہوئی تھی ۔ خاتون نے اپنے سرکاری ملازم شوہرسے خلع کیلئے چند ماہ قبل درخواست دائرکی تھی ‘ان کے سابقہ شوہر نے بھی علیحدگی کی تصدیق کردی ، ان کا کہنا تھا کہ  یہ فیصلہ روحانی وجوہات کی بناءپر کیا گیا۔

یاد رہے کہ عمران خان نے پہلی شادی 16 مئی 1995 کو جمائما خان سے کی تھی  جو 9 برس کے بعد 22 جون 2004 کو طلاق پر ختم ہوگئی تھی اور  جمائما خان سے ان کے دو بیٹے سلیمان خان اور قاسم خان ہیں۔ اور ان کی دوسری شادی ٹی وی اینکر ریحام خان سے ہوئی تھی جو بہت مشکل سے  ہی 10 ماہ ہی چل سکی تھی۔

واضح رہے کہ عمران خان پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین ہیں جو پاکستان کی تیسری بڑی سیاسی جماعت ہے۔ انہوں کے کرپشن کے خلاف جنگ کا علان کر کے عوام کے پسندیدا سیاست دان بن گئے ہیں۔