دہشت کے ماحول میں پاک فوج نے علم کا پرچم لہرا دیا


کرم ایجنسی ( 24نیوز )بدامنی کیلئے مشہور وسطی کرم ایجنسی میں فورسز کی کامیاب کارروائیوں کے بعد امن قائم ہوگیا۔فورسز نے علاقے میں ترقیاتی کاموں کا سلسلہ شروع کردیا اور دشوار گزار پہاڑی علاقے ڈوگر میں آرمی پبلک سکول بھی کھول دیا۔
تفصیلات کے مطابق وسطی کرم ایجنسی کے دشوار گزار پہاڑی علاقے جہاں کئی سال تک بدامنی تھی اور دہشت گرد یہاں اپنے مراکز قائم کررکھے تھے فورسز نے طویل جدوجہد اور قربانیوں کے بعد اس علاقے کا کنٹرول حاصل کرلیا ہے وسطی کرم کا علاقہ ڈوگر بھی نو گو ایریا اور اسلحے کی مارکیٹ تھی فورسز نے قیام امن کے بعد یہاں تعمیر وترقی کے کام بھی شروع کر دئیے ہیں اور ڈوگر میں آرمی پبلک اسکول بھی کھول دیا۔ کل تک قبائل کے ہاتھوں میں بندوق نظر آرہے تھے لیکن آج وہ اپنے بچوں کو ہاتھ سے پکڑے اور گود میں لئے سکول کی طرف رواں دواں نظر آتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:ایران سے جوہری معاہدہ ختم کرنے پر باراک اوباما کی مخالفت

اے پی ایس کے قیام سے علاقے کے بچوں میں بھی پڑھنے کا شوق پیدا ہوگیا ہے اور تعلیم سے بے خبر بارہ سو بچے سکول میں داخل ہوگئے ہیں
اے پی ایس کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاک آرمی کے بریگیڈیئر اختر علیم اور فرنٹیئر کور کے ونگ کمانڈر کرنل مسعود انجم نے کہا کہ اے پی ایس کے قیام سے علاقہ ترقی کرے گا۔
اس موقع پر سیاسی و سماجی رہنماو¿ں اور علاقے کے عمائدین نے غریب اور یتیم بچوں کے کتابوں کے لئے نقد عطیات کا بھی اعلان کیا
قبائل کا کہنا ہے کہ اے پی ایس کے قیام سے ان کے بچے بہتر تعلیمی ماحول میں تعلیم حاصل کرسکیں گے۔

اظہر تھراج

صحافی اور کالم نگار ہیں،مختلف اخبارات ،ٹی وی چینلز میں کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں