ریکوڈک کیس، پاکستان کا جرمانہ چیلنج کر نے کا فیصلہ

ریکوڈک کیس، پاکستان کا جرمانہ چیلنج کر نے کا فیصلہ


اسلام آباد (24 نیوز) وفاقی وزیر برائے توانائی عمرایوب نے کہاہے کہ ریکوڈک کیس میں پاکستان کو جرمانہ چیلنج کرنے جارہے ہیں۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے عمر ایوب نے کہا کہ شفافیت موجود حکومت کا طرہ امتیاز ہے، میرٹ سے ہٹ کر کوئی فیصلہ نہیں کررہے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ حکومتوں نے آئی پی پیز پر اخراجات کا بوجھ ڈالا، ریکوڈک اور کارکے کیسز میں پاکستان کا نقصان ہوا، ریکوڈک کیس میں پاکستان پر جرمانے کو چیلنج کرنے جارہے ہیں۔

وزیرتوانائی عمرایوب نے کہا کہ ن لیگ کےدورمیں سرکلرڈیٹ بڑھ گیاتھاجس کےلیےحکومت کےپاس پیسےنہیں تھے، جو کمپنیاں اپنے کیسز بین الاقوامی مصالحت میں لیکر گئے ہیں ان پر بھی حکومت کو چودہ پندرہ ارب روپے دینے پڑ رہے ہیں، ان کمپنیوں کا گیس سیلز ایگریمنٹ تبدیل نہیں کیا گیا، یہ پلانٹ میرٹ لسٹ پر آتا ہے تب اسکو چلاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 1994کی پاور پالیسی کے تحت یہ لگایا گیا تھا، یہ طریقہ اس لئے اپنایا جارہا ہے کہ کہیں یہ کمپنیاں باہر کے ممالک میں آربیٹیریشن میں نہ چلی جائیں، عمران خان حکومت کا ہر قدم صاف شفاف ہے۔

عمر ایوب کا کہنا تھا کہ رمضان المبارک کے مہینے میں بجلی کی لوڈشیڈنگ نہیں کی، بجلی کے نظام کی ترسیل 100فیصد کرنا ہماری ترجیح ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ تمام فیڈرز چل رہے ہیں، مساجد امام بارگاہوں میں بجلی بلا تعطل فراہم کررہے ہیں، جی آئی ڈی سی بھی درست قدم تھا لیکن جب انگلی اٹھائی گئی تو ہم نے معاملہ سپریم کورٹ بھیج دیا، آئی پی پیز کو ستاسی یا اٹھاسی فیصد رقوم دے رہے ہیں، گزشتہ حکومت کی نااہلی ، نالائقیقیں کی وجہ سے سرکلر ڈیٹ بن گیا، گذشتہ حکومت بیوقوفانہ انداز میں سسٹم چلا رہے تھے۔

Malik Sultan Awan

Content Writer