ماڈلنگ کے لیے کراچی سے لاہور آنے والی لڑکی ہلاکت کا معمہ حل نہ ہوسکا

 ماڈلنگ کے لیے کراچی سے لاہور آنے والی لڑکی ہلاکت کا معمہ حل نہ ہوسکا


لاہور (24نیوز) کراچی سے ماڈلنگ کے لیے لاہور آنے والی لڑکی کی ہلاکت کا معمہ حل نہ ہوا۔متوفیہ نشہ کی زیادتی کی وجہ سے ہلاک ہوئی یا معاملہ کچھ اورہے؟ ورثا حقائق جاننےکےلیے پوسٹ مارٹم رپورٹ کے منتظر ہیں۔والد کا کہنا ہے کہ انکی لڑکی گزشتہ 3 سال سے شوبز سے وابستہ تھی۔

ماڈلنگ کا شوق لیے کراچی سے آنے والی لڑکی لاہور میں موت کی وادی میں چلی گئی. متوفیہ کے پوسٹ مارٹم کے بعد لاش ورثا کے حوالے کر دی گئی ۔ لڑکی کے والد کا کہنا تھا کہ متوفیہ اقرا سعید کچھ دن پہلے دبئی سے وآپس آئی، لاہور میں کہاں اور کس کے پاس رہائش تھی کچھ معلوم نہیں ، اقراء دوسری نوکری کی تلاش کررہی تھی۔

پولیس نے ماڈل اقراء سعید کے موبائل سے اہم ڈیٹا حاصل کر لیا۔ ذرائع کے مطابق اقراء سعید گلشن راوی کے رہائشی حسن بٹ ، عثمان اور عمر نامی افراد کے ساتھ رابطے میں تھی۔اقراء سعید نے مذکورہ افراد کے ساتھ آئس یا پلز کا نشہ کیا ،طبعیت خراب ہونے پر تینوں نوجوان اسے ہسپتال چھوڑ کر فرار ہوگئے۔ ڈاکٹروں کے مطابق اقراء کی موت نشے کی زیادتی کے باعث ہوئی ۔

موبائل فون سے ملنے والی معلومات پر عثمان ، حسن اور عمر کے خلاف مقدمہ درج اورعثمان نامی ملزم گرفتار کیا جا چکا ہے جبکہ دیگر دونوں ملزمان نے عبوری ضمانتیں کروالی ہیں۔ پولیس کے مطابق اقراء سعید کے ساتھ زیادتی کے بارے میں حتمی رپورٹ پوسٹ مارٹم کے بعد معلوم ہوگی۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔