میاں نوازشریف اتنے بیمار کیوں ہوئے؟ حسین نواز کے حکومت پرسنگین الزامات

میاں نوازشریف اتنے بیمار کیوں ہوئے؟ حسین نواز کے حکومت پرسنگین الزامات


لندن(24 نیوز)سابق وزیر اعظم میاں نوازشریف اتنے بیمار کیوں ہوئے؟ حسین نواز نے سابق وزیراعظم کی بگڑتی صحت پر پھرشکوک وشبہات کا اظہا ر کردیا ۔ساتھ ہی ساتھ حکومت پر سنگین الزامات کی بوچھاڑ کردی۔کہا نیب حراست سے قبل پلیٹ لیٹس 75ہزار،دوسرے روز 16ہزاررہ گئے، میڈیکل رپورٹ سے حقیقت سامنےآئےگی۔

سابق وزیراعظم نواز شریف 19 نومبر سے علاج کی غرض سے لندن میں مقیم ہیں جہاں ان کے مسلسل ٹیسٹ اور طبی معائنہ کیا جارہا ہے۔ نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان اور حسین نواز نے لندن میں سابق وزیراعظم کے علاج و معالجے سے متعلق  پریس کانفرنس کی۔

ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی طبیعت کو ٹھیک نہیں کہا جاسکتا کیوں کہ انہیں فالج ہونے کا شدید خطرہ ہے۔اس  صورتحال کی بڑی وجہ ان سے جیل میں رکھاگیا سلوک بھی ہے،نواز شریف کی طبی صورتحال کی بڑی وجہ ان سے جیل میں رکھاگیا سلوک بھی ہے، نواز شریف کو دوسرا ہارٹ اٹیک 24 اکتوبر کو ہوا تھا، نواز شریف کے پلیٹیلیٹس ہفتے میں 2 بار چیک کیے جاتے ہیں، پلیٹیلیٹس کو مستحکم رکھنے کے لیے دوائیں دی جا رہی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ نیب کو کیا مسئلہ تھاکہ جیل میں نواز شریف سے سوالات نہیں کر سکتے تھے؟ نیب تحویل میں ایک دن میں نواز شریف کے پلیٹیلٹس 75 ہزار سے 2 ہزار پر آگئے تھے اور ایک دن میں پلیٹیلیٹس کا اتنا گرجانا بڑا سوالیہ نشان ہے، پلیٹیلیٹس کے معاملے پر میڈیکل رپورٹ جلد ہی متوقع ہے جسے عدالت میں جمع کرایا جائے گا، علاج کب تک چلے، اس میں وقت کا تعین نہیں کیا جا سکتا، ان کی صحت ابھی تک تشویش ناک ہے۔ 

 سابق وزیراعظم نواز شریف کے بیٹے حسین نواز نے میڈیا سے بات چیت میں کہا ہے کہ نواز شریف کو قید تنہائی میں رکھا گیا اور جیل میں اذیت دی جاتی رہی، باپ کے سامنے بیٹی کو گرفتار کیا گیا، والدہ کی وفات کا والد پر گہرا اثر ہے،  میاں نواز شریف کو کوٹ لکھپت سے نیب آفس کیوں لایا گیا؟ نیب کی حراست سے قبل پلیٹیلیٹس 75 ہزار تھے لیکن دوسرے روز ان کے پلیٹیلیٹس 16 ہزار رہ گئے تھے، ڈاکٹر ان کو کچھ دیے جانے کی تحقیق کررہے ہیں اور چند دن میں والد کی میڈیکل رپورٹ آجائے گی تو حقیقت سامنے آجائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ کسی پر کوئی الزام نہیں لگا رہا، رپورٹ آنے پر ہر بات واضح ہو جائے گی، اِن رپورٹس کو عدالت میں جمع کرائیں گے۔ پلیٹ لیٹس متوازن ہونے کے بعد ہی والد کو لاحق امراض کا علاج شروع ہوسکے گا۔

Azhar Thiraj

Senior Content Writer