بلوچستان کے نئے وزیراعلیٰ کے لیے جوڑ توڑ،صالح بھوتانی مضبوط امیدوار

بلوچستان کے نئے وزیراعلیٰ کے لیے جوڑ توڑ،صالح بھوتانی مضبوط امیدوار


کوئٹہ(24نیوز) بلوچستان کے نئے وزیراعلیٰ کے لیے جوڑ توڑ کا آغاز ہوگیا اور مسلم لیگ (ن) کی جانب سے بھی دو نام سامنے آگئے تاہم اپوزیشن نے برتری ظاہر کی تو انہیں وزیراعلیٰ کا امیدوار لانے کی پیشکش کی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور مسلم لیگ (ن) کے صدر نواز شریف کے درمیان ملاقات کے دوران فیصلہ کیا گیا ہے کہ اگر وزیراعلیٰ کے لئے اپوزیشن جماعتیں برتری ثابت کرنے میں کامیاب ہوئیں تو وزارت اعلیٰ کے لئے انہیں پیشکش کی جائے گی۔ وزیراعظم اور نواز شریف کے درمیان ہونے والی ملاقات میں اسمبلی توڑنے کے خدشات کا بھی اظہار کیا گیا۔مسلم لیگ (ن) کی جانب سے وزیراعلیٰ کے لئے سردار صالح بھوتانی اور جان محمد جمالی کے نام سامنے آئے ہیں ۔

خیال رہے کہ سردار صالح بھوتانی 2013 کے انتخابات میں صوبائی اسمبلی کی نشست پی بی 45 لسیبلا 2 سے کامیاب ہوئے تھے جنہیں پارٹی میں قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے جب کہ پارٹی کی بڑی تعداد ان کے وزیراعلیٰ بننے کی حامی ہے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناءاللہ زہری کے مستعفی ہونے کے بعد تحریک عدم اعتماد کی اتحادی جماعتوں مسلم لیگ (ن)، مسلم لیگ (ق)، بی این پی (مینگل )، بی این پی (عوامی )، اے این پی، مجلس وحدت المسلمین اور جمعیت علمائے اسلام کے دو الگ الگ اجلاس رات گئے تک جاری رہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاسوں میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ نیا وزیراعلیٰ متفقہ طور پر نامزد کیا جائے گا جس کے لئے یہ فارمولہ طے کیا گیا ہے کہ آئندہ وزیراعلیٰ مسلم لیگ (ن) سے ہی ہوگا تاہم اس کی نامزدگی میں مسلم لیگ کی مرکزی قیادت سے مشاورت کی جائے گی اور نہ ہی انہیں اعتماد میں لیا جائے گا، متفرق اجلاسوں میں فیصلہ کیا گیا کہ بلوچستان کی اتحادی جماعتیں ہی مل کر نئے وزیراعلیٰ کا فیصلہ کریں گی اور اس ضمن میں کسی بھی قسم کی جلد بازی کے بجائے مشاورت اور اتفاق رائے سے فیصلہ کیا جائے گا۔

فارمولے کے تحت متفقہ نامزدگی کے لئے مسلم لیگ (ن) اور مسلم لیگ (ق) مل کر دو نام تجویز کریں گی جبکہ تحریک عدم اعتماد کی دیگر جماعتیں بھی مل کر مسلم لیگ سے ہی دو نام تجویز کریں گی پھر ان ناموں پر تمام اتحادی جماعتیں مل کر حتمی فیصلہ کریں گی۔

ثناءاللہ زہری کے مستعفی ہونے کے بعد جان جمالی، میر سرفراز بگٹی، میر عبد القدوس بزنجو اور سردار صالح بھوتانی مضبوط امیدواروں کے طور پر سامنے آئے ہیں،ان میں سے سردار صالح بھوتانی کے وزیر اعلیٰ بنائے جانے کا امکان ہے۔

مزید پڑھنے کیلئے لنک پر کلک کریں