سابق صدر آصف علی زرداری نے گرفتاری دے دی



(24 نیوز) اسلام آباد ہائیکورٹ کی جانب سے ضمانت مسترد کیے جانے کے بعد نیب کی ٹیم نے آصف زرداری کو گرفتار کرلیا، کل ریمانڈ کیلیے احتساب عدالت میں پیش کردیا جائیگا،سابق صدر آصف زرداری کہتےہیں کہ گرفتاری سے گھبرانے والے نہیں،،حالات کا ڈٹ کر مقابلہ کروںگا۔

سابق صدر آصف علی زرداری کو نیب نے گرفتار کرلیا

مبینہ منی لانڈرنگ کیس میں اسلام آباد ہائی کورٹ سے درخواست ضمانت مسترد ہونے کے بعد سابق صدر آصف علی زرداری کو نیب نے گرفتار کرلیا، اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست ضمانت کی سماعت کے بعد سابق صدر آصف زرداری، زرداری ہاوس اسلام آباد پہنچے۔ ضمانت مسترد ہونے پر نیب کی ٹیم آصف زرداری کی گرفتاری کے لیے پولیس کی بھاری نفری کے ہمراہ زرداری ہاؤس اسلام آباد پہنچی، جہاں آصف زرداری کے وکلاء نے نیب کی ٹیم سے عدالت کی جانب سے گرفتاری کے احکامات طلب کیے۔

زرداری ہاؤس کے اطراف بھاری تعداد میں اہلکار تعینات ہیں، پولیس نے زرداری ہاؤس کے اطراف راستے سیل کردیے، زرداری ہاؤس پہنچنے پر نیب ٹیم، آصف زرداری اور ان کے وکلاء کے درمیان کچھ دیر بات چیت ہوئی جس کے بعد سابق صدر نے گرفتاری دینے پر آمادگی ظاہر کردی۔

گرفتاری کے موقع پر آصف زرداری اپنی صاحبزادی آصفہ بھٹو زرداری سے ملے اور انہیں گلے لگایا جب کہ اس موقع پر بلاول بھٹو زرداری بھی موجود تھے اور گاڑی میں بیٹھتے وقت ان سے ملے، نیب نے آصف زرداری کو نیب راولپنڈی منتقل کرلیا ہے۔ سابق صدر کو کل احتساب عدالت میں پیش کرکے ان کے ریمانڈ کی استدعا کی جائے گی۔

گھبرانے والا نہیں،حالات کا ڈٹ کر مقابلہ کروں گا:آصف علی زرداری

گرفتاری سے قبل پارٹی رہنماوں سے گفتگو میں سابق صدر آصف زرداری نے کہاکہ گرفتاری سے گبھرانا والا نہیں، 14سال ٹرائل کے بعد مجھ پر کچھ ثابت نہیں ہوا،،،اب بھی بے بنیاد الزامات ثابت نہیں ہوسکیں گے۔

سابق صدر آصف زرداری کی گرفتاری کیلئے نیب کی پانچ ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں، فریال تالپور کی گرفتاری کیلیے خواتین پولیس اہلکاروں کی خدمات بھی لی گئیں ہیں، نیب کی ٹیم نے اسلام اباد اور راولپنڈی پولیس کی مدد بھی حاصل اسلام آباد اور راولپنڈی پولیس کی نفری بھی نیب ٹیموں کے ہمراہ ہوں گی،نیب کی ایک ٹیم پارلیمنٹ ہائوس پہنچ گئی۔

جیالوں کو پرامن رہنے کی اپیل

ترجمان چیئرمین بلاول بھٹو زرداری مصطفی نواز کھوکھر نے ملک بھر کے جیالوں سے پرامن رہنے کی اپیل کی ہے،ان کا کہنا ہے کہ  ہم اسلام آباد ہائی کورٹ کے تفصیلی فیصلے کا انتظار کررہے ہیں، جیالے مشتعل نہ ہوں، ضبط کا مظاہرہ کریں، تفصیلی عدالتی فیصلے کی روشنی میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے،  آج سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلاس میں اہم فیصلے ہوں گے۔

Malik Sultan Awan

Content Writer