جہلم: 17 سالہ لڑکی ہوشین کے قاتل کا پتہ چل گیا، وہ کوئی اور نہیں بلکہ۔۔۔


جہلم (24 نیوز) دینہ کے نواحی گاؤں چھجہ سناٹھہ میں پراسرار طریقہ سے ہلاک ہونے والی 17 سالہ لڑکی ہوشین کا معمہ حل ہوگیا۔

چند روز قبل پولیس کو 17 سالہ لڑکی کو کرنٹ لگنے سے ہلاکت کا بتایا گیا تھا۔ جس پر معاملہ مشکوک گزرنے پر پولیس نے لڑکی کی نعش کو پوسٹمارٹم کے لیے قبضہ میں لیا تو لواحقین کی جانب سے احتجاج کیا گیا لیکن بھاری نفری کے باعث کچھ نہ کر سکے۔

یہ بھی پڑھئے: 2دن تک پانچویں جماعت کی طالبہ سےمبینہ زیادتی، مصباح عدالت پہنچ گئی

پولیس نے نعش کو پوسٹمارٹم کے لیے ڈی ایچ کیو ہسپتال جہلم پہنچایا جہاں پوسٹمارٹم کیا گیا جس کی رپورٹ پر گزشتہ روز میڈیکل آفیسر نے ہلاکت کی وجہ کرنٹ نہیں گلا دبانے کی تحریر کر دی۔

جس پر پولیس تھانہ منگلاء نے لڑکی ہوشین کے والد نذیر جٹ سمیت 3 نامزد اور دیگر نامعلوم افراد کو قتل کر کے جرم چھپانے اور پولیس سے غلط بیانی کرنے پر دفعہ 34/302/201 تعزیرات پاکستان کے تحت مقدمہ درج کر لیا۔

پڑھنا نہ بھولئے: وزیر آباد،  تیرہ سالہ لڑکی کو نامعلوم افراد نے اغوا کرلیا 

جب یہ خبر منظر عام پر آئی تو کہرام مچ گیا کہ لڑکی کا اصل قاتل کوئی اور نہیں بلکہ بیٹی کا تحفظ کرنے والا باپ ہی نکلا۔ جس پر قتل کی ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے۔