لنڈی کوتل کی باہمت اور کرکٹ کی ابھرتی کھلاڑی جمائمہ آفریدی

لنڈی کوتل کی باہمت اور کرکٹ کی ابھرتی کھلاڑی جمائمہ آفریدی


پشاور(24نیوز) صوبائی دارالحکومت پشاور سے دور سنگلاخ چٹانوں، دور افتادہ علاقے اور خواتین کو جائز حقوق دینے کی سوچ رکھنے والے علاقے لنڈی کوتل کی باہمت اور کرکٹ کی ابھرتی کھلاڑی جمائمہ آفریدی کی کہانی۔

سنگلاخ پہاڑوں کے بیچ،گھر کے اندر بنی کرکٹ پیچ پر بلا اور گیند اٹھائے اپنے بھائیوں اور والد کیساتھ کرکٹ کھیلنے والی قبائلی علاقے سے تعلق رکھنے والی  جمائمہ آفریدی کا تعلق ضلع خیبر کے علاقے لنڈی کوتل سے ہے جہاں عورت کو چاردیواری تک ہی محدود رکھا جاتا ہے۔  

جمائمہ آفریدی پشاور میں منعقدہ خواتین کی پہلی ٹی ٹونٹی کرکٹ لیگ میں فاتح ٹیم کا حصہ رہی،کہتی ہے کہ میں پہلی قبائلی خاتون کرکٹر ہوں جو گھر کے کام کاج کیساتھ بیڈمنٹن اور اوشو کی بھی بین الصوبائی مقابلوں کی کھلاڑی ہوں،جو میرے والد کے مدد کے بغیر ناممکن ہے۔

جمائمہ آفریدی کا نام ان کے والد نے موجودہ وزیراعظم عمران خان کی اہلیہ کی خیبر ایجنسی کے دورے اور ان کے اخلاق سے متاثر ہو کر رکھا۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔