’’ڈالر کہاں پر چلاگیا، مہنگائی ہے کہ پکڑ میں نہیں‘‘

’’ڈالر کہاں پر چلاگیا، مہنگائی ہے کہ پکڑ میں نہیں‘‘


اسلام آباد(24نیوز)سپریم کورٹ میں پٹرول اور بجلی پراضافی ٹیکس سے متعلق کیس کی سماعت،چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ آج کل مہنگائی میں اضافے کی وجہ سے لوگ پریشان ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں پٹرول اور بجلی پراضافی ٹیکس سے متعلق کیس کی سماعت،چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ آج کل مہنگائی میں اضافے کی وجہ سے لوگ پریشان ہیں، ڈالر کہاں پر چلاگیا، مہنگائی ہے کہ پکڑ میں نہیں۔ اٹارنی جنرل نے بتایا سابق حکومت نےپی ایس او میں اقرباپروری پر تعیناتیاں کیں،جس سے قومی خزانے کو نقصان پہنچا۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا سابقہ حکومت نے کون سی غیر قانونی تعیناتیاں کیں، وکیل پی ایس او نے بتایا کہ سابقہ حکومت نے صرف ایم ڈی پی ایس او کی تعیناتی کی، چیف جسٹس نے استفسار کیا ایم ڈی کی تنخواہ کیا تھی ہمیں بتائیں ،وکیل نے بتایا 37 لاکھ روپے تنخواہ تھی، چیف جسٹس نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کیا وہ ریاست کا اتنا لاڈلا تھا کہ اسے اتنی تنخواہ دی گئی۔