زنیب کے قتل اور 2شہریوں کی ہلاکت کے بعد قصور میں حالات کشیدہ

زنیب کے قتل اور 2شہریوں کی ہلاکت کے بعد قصور میں حالات کشیدہ


قصور (24نیوز) کم سن زینب سے زیادتی و قتل کے خلاف شہر میں ہنگامے پھوٹ پڑے اور احتجاج کرنے والے مشتعل مظاہرین پر پولیس کی فائرنگ سے 2 افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے جبکہ انتظامیہ نے حالات پر قابو پانے کے لیے رینجرز کو طلب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق زنیب کے قتل اور 2شہریوں کی ہلاکت کے بعد قصور میں حالات کشید ہو گئے، شہر میں مکمل ہڑتال جاری ہے، مارکیٹیں ، تجارتی مراکز اور تعلیمی ادارے بند ، مظاہرین سول اسپتال کے باہر جمع ، کالی پل چوک پر دھرنا ، فیروز پور روڈ بند ،زینب کے قتل کے خلاف پنجاب بھر میں وکلا کی ہڑتال جاری ہے۔

  قصور میں کم سن زینب سے زیادتی و قتل کے واقعے کیخلاف خواتین سمیت بڑی تعداد میں شہری سڑکوں پر نکل آئے اور پولیس و انتظامیہ کی نااہلی کیخلاف شدید احتجاج کیا۔ اقعے کے خلاف شہر میں مکمل ہڑتال کی گئی اور کاروبار زندگی متاثر رہا، مظاہرین کا کہنا تھا  کہ زینب 5 روز سے اغوا تھی لیکن اس کے باوجود پولیس نے اس کی بازیابی کے لیے کوئی عملی قدم نہیں اٹھایا۔

مظاہرین نے پولیس پر پتھراؤ کیس جس کے پر پولیس نے مطاہرین کو منتشر کرنے کیلئے براہراست سیدھی فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہو گئے۔

مظاہروں میں زخمی ہونے والے کو اسپتال منتقل کیا گیا جہاں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے 2 افراد جاں بحق ہو گئے۔ دونوں افراد کی نماز جنازہ آج ادا کی جائے گی ،جبکہ فائرنگ کرنے والے 16 اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔