"پاکستان میں ہر پانچ میں سے ایک بچے سے زیادتی ہوتی ہے"


کراچی (24 نیوز) پاکستانی فلم انڈسٹری کی صفِ اول کی اداکارہ ماہرہ خان اور معروف گلوکار شہزاد رائے نے کہا ہے کہ پاکستان میں ہر پانچ میں سے ایک بچے کو زیادتی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ زینب کو انصاف فراہم کرنا حکمرانوں کی ذمہ داری ہے۔

قصور میں زینب سے زیادتی اور پھر قتل کے واقعہ کے بعد کراچی پریس کلب میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مائرہ خان کا کہنا تھا کہ ہمیں اپنے بچوں کے مستقبل کے بارے میں سوچتے ہوئے ان سے بات کرنی ہوگی اور انہیں آگاہی فراہم کرنا ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ انصاف فراہم کرنا حکمرانوں کی ذمہ داری ہے۔ حکمرانوں کی یہ بھی ذمہ داری ہے کہ ناصرف اس واقعہ میں ملوث ملزمان کو تلاش کریں بلکہ اس سے پہلے ہونے والے واقعات کے ملزمان کو بھی تلاش کریں۔   ماہرہ خان کا کہنا تھا کہ ہمارا معاشرہ اچھائی کی جانب بڑھ رہا ہے جس کا ثبوت واقعہ کے بعد آنے والا ردعمل ہے۔

اس موقع پر انہوں نے بچوں کو اس مسئلہ کے حوالے سے طویل المدتی حل ڈھونڈنے پر زور دیا اور کہا کہ ہمیں اس بارے میں بات کرنی ہے۔ ہمیں اپنے بچوں کو یہ نہیں کہنا کہ 'چپ رہو' اس بارے میں بات نہ کرو، ہمیں اپنا نصاب تبدیل کرنا ہے۔

شہزاد رائے نے کہا کہ پاکستان میں ہر پانچ میں سے ایک بچے سے زیادتی ہوتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ قوانین بہتر بنانے کے لیے اقدامات کم کیے گئے ہيں۔ ملک بھر میں مستقبل کی زینب کو بچانے کے اقدامات کیے جائيں۔