نواز شریف پر نوجوان نے جوتا پھینک دیا


لاہور (24نیوز)لاہور میں جامعہ نعیمیہ میں تقریب کے دوران بد نظمی نواز شریف پر جوتا مارا گیا،نوازشریف جیسے ہی اسٹیج پر خطاب کے لئے آئے تو شرکا میں موجود ایک نامعلوم  شخص نے انہیں جوتا دے مارا۔

ذرائع کے مطابق   جامعہ نعیمیہ میں تقریب کیلئےنوازشریف جیسے ہی اسٹیج پر خطاب کے لئے آئے توجوتا مارا گیا، جوتا جامعہ نعیمیہ کے ایک طالب علم نے مارا جوتا نوازشریف کے کندھے پرلگا، سیکیورٹی اہلکاروں نے  موقع پر ہی  جوتا پھینکنے والے شخص کو حراست میں لے لیا۔نوازشریف کے باہرنکلنے پرایک طالب علم نے نعرے بھی لگائے.

جوتا پڑنے کے نا خشگوار و اقعہ کے بعد نواز شریف نے خطاب میں کہا کہ  ڈاکٹر سرفراز نعیمی کی سربراہی میں تعلیم حاصل کی، جامعہ نعیمیہ کی ایک ایک اینٹ میرے سامنے رکھی گئی۔

سابق صدر آصف علی زرداری نے نواز شریف پر جوتا پھینکنے کے واقعہ کی مذمت کی ہے, انہوں نے کہا ہے کہ ایسے واقعات جمہوری رویوں کیخلاف سازش ہے،سیاست میں برداشت اور رواداری کو مقدم رکھا جائے

مریم اورنگزیب نے واقعہ کی مزمت کرتے ہوئے کہا کہ ایسے واقعات منصوبہ بندی سے کیئے جاتے ہیں انہوں نے مزید کہا کہ جوتا پھینکنا قابل مزمت ہے، معاشرے میں عدم برداشت کا رحجان ہے۔

قمر زمان کاقرہ نے مزمت کرتے ہوئے کہا کہ سدِ باب نہ کیا گیا تو معاشرہ انتشار کا شکار ہو جائے گا۔

وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے نوازشریف پر جوتا پھینکنے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ واقعہ انتہائی شرمناک ہے،یہ رجحان ملک اور قوم کیلئے تباہ کن ہے،سیاسی جماعتوں کی مذمت خوش آئند ہے.

یہ خبر بھی لازمی پڑھیں:  سیالکوٹ میں خواجہ آصف کے چہرے پر دل جلے نے سیاہی پھینک دی

واضح رہے کہ مسلم لیگ ن کے رہنماؤں پر جوتے پھینکنے کا یہ نیا واقعہ نہیں   بلکہ نواز شریف سے پہلے احسن اقبال اور پرویز رشید پر بھی جوتے پھینکے گئے،جبکہ خواجہ آصف کے منہ پر سیاہی پھینک دی گئی۔

پاکستان میں سیاست دانوں کی لفظی گولہ باری نے عوام کا مزاج بھی بگاڑ دیا ہے ، ن لیگ کے رہنماؤں پر اجتماعات کے دوران جوتے اور سیاہی سے حملے بڑھ گئے ۔

لاہور میں نواز شریف پر جوتا پھینکے سے پہلے نارروال میں ورکرز کنونشن میں وزیر داخلہ احسن اقبال پر بھی حارث نامی نوجوان نے جوتا پھینکا   گیا تھا۔

کراچی ایئر پورٹ پر سابق وزیر پرویز رشید پر بھی مذہبی جماعت کے کارکنوں نے جوتا پھینکا جبکہ ایک روز پہلے سیالکوٹ میں وفاقی وزیر خواجہ آصف کے چہرے پر سیاہی پھینک دی گئی ۔