پاکستان آج ٹیسٹ سٹیٹس حاصل کرنیوالے آئرلینڈ کیخلاف پہلا میچ کھیلے گا


ڈبلن(24نیوز)انگلینڈ میں ڈیرے ڈالے قومی کرکٹ ٹیم آج اپنے دورے کا باقاعدہ آغاز کرے گی ،قومی ٹیم اپنا پہلا میچ آج ٹیسٹ سٹیٹس حاصل کرنیوالی آئرلینڈ کیخلاف تین بجے ڈبلن میں کھیلی گی۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان اور آئرلینڈ کے درمیان میچ پاکستانی وقت کے مطابق سہہ پہر 3 بجے شروع ہوگا۔ ٹیسٹ کرکٹ کا پہلا میچ کھیلنے والی آئرلینڈ کی ٹیم نے میچ کی بھرپور پریکٹس کی ہے۔

پاکستانی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے کہا ہے کہ آئریش ٹیم کو آسان نہیں لیں گے اور تمام نوجوان کھلاڑی اپنی بھرپور محنت سے میدان میں اتریں گے۔

جبکہ وقار یونس نے کہا کہ ہوم کنڈیشنز میں آئر لینڈ کے ساتھ میچ آسان نہیں ہوگا۔ ہوم گراؤنڈ کا آئریش ٹیم کو ایڈوانٹیج حاصل ہوگا۔

سابق چیف سلیکٹر اور ٹیسٹ کرکٹر صلاح الدین نے پاکستان اور آئرلینڈ کی ٹیموں کے درمیان میچ کو تاریخی قرار دے دیا، کہتے ہیں کنڈیشنز آئر لینڈ کے حق میں ہیں تو پاکستانی بلے باز بھی فارم میں ہیں۔

بیٹنگ اور باؤلنگ آرڈر

پاکستان نے ٹیسٹ کرکٹ میں پہلی انٹری دینے والی آئرش ٹیم کو قابو کرنے کے لیے ینگ بریگیڈ تیار کرلی۔ آئرلینڈ کے خلاف ٹیسٹ میچ کے لئے نوجوان کھلاڑیوں پر انحصار کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ، ڈبلن ٹیسٹ میں امام الحق اور فہیم اشرف کو ٹیسٹ کیپ ملنے کے قوی امکانات ہیں۔

آئرلینڈ کے خلاف 15 رکنی قومی اسکواڈ کپتان سرفراز احمد، اسد شفیق، اظہر علی، بابراعظم، فہیم اشرف، حارث سہیل، فخر زمان، امام الحق، محمد عباس، محمد عامر، راحت علی، سعد علی، سمیع اسلم، شاداب خان اور عثمان صلاح الدین شامل ہیں۔

باؤلنگ کے لئے ساز گار کنڈیشنز میں اظہر علی کے ساتھ امام الحق سے اننگز کا آغاز کروایا جائے گا۔ حارث سہیل نمبر تین پر ،اسد شفیق نمبر چار اور بابر اعظم نمبر پانچ پر بیٹنگ کریں گے۔

کپتان سرفراز احمد لوئر مڈل آرڈر میں ٹیم کو سہارا دیں گے تو لوئر آرڈر میں فرسٹ کلاس کرکٹ میں عمدہ بیٹنگ کا ریکارڈ رکھنے والے آل راونڈر فہیم اشرف اور شاداب خان بھی بیٹنگ کو سہارا دینے کو موجود ہوں گے ۔

فاسٹ باولنگ میں محمد عامر کو راحت علی اور محمد عباس کے ساتھ ساتھ فہیم اشرف کا ساتھ حاصل ہوگا جبکہ شاداب خان کی گھومتی گیندیں آئرش بلے بازوں کے لئے کسی امتحان سے کم نہیں ہوں گی۔

جبکہ محکمہ موسمیات نے 11 مئی سے 14 مئی تک ڈبلن میں بارش کی پیشگوئی کی گئی ہے، بارش ہونے کی صورت میں میچ متاثر ہونے اور آئرلینڈ کرکٹ بورڈ کو بھاری خسارے کا خدشہ ہے۔